کتاب: سعادۃ الدارین ترجمہ تعلیقات سلفیہ برتفسیر جلالین - صفحہ 51
ہیں،جیسا کہ غالی شیعہ اور صوفیہ کہتے ہیں،وہ یہ عقیدہ رکھتے ہیں کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو اللہ نے نور سے پیدا کیا،اور اس نے اپنے نور ہی سے تمام اشیاء کو پیدا کیا۔ (العقیدۃ الاسلامیۃ :جمیل زینو،ص:۶۸) ﴿قَالَ فَإِنَّہَا مُحَرَّمَۃٌ عَلَیْہِمْ أَرْبَعِیْنَ سَنَۃً۔۔۔۔۔﴾ ۔۔۔وسأل موسی ربہ عند موتہ۔۔۔کما فی الحدیث(۲۳۶ /۹۸) ٭ بخاری(۳۴۰۷)مسلم(۲۳۷۲) ﴿قَالَ فَإِنَّہَا مُحَرَّمَۃٌ عَلَیْہِمْ أَرْبَعِیْنَ سَنَۃً۔۔۔۔۔﴾ وروی أحمد فی مسندہ۔۔۔۔۔سار إلی بیت المقدس(۲۳۷ /۹۸) ٭ احمد:۲ /۳۲۵،اس سند میں ابو بکر بن عیاش ضعیف راوی ہیں،اس واقعہ کو امام بخاری نے اپنی صحیح بخاری میں ذکر کیا ہے(۳۱۲۴،۵۱۵۷) ﴿إِنَّمَا جَزَاء الَّذِیْنَ یُحَارِبُونَ اللّٰهَ۔۔۔۔﴾ ونزل فی العرنیین۔۔۔۔۔۔واستاقوا الإبل۔(۲۳۸ /۹۹) ٭ بخاری(۴۶۱۰) ﴿سَمَّاعُونَ لِلْکَذِبِ أَکَّالُونَ لِلسُّحْت۔۔۔إِنَّ اللّٰهَ یُحِبُّ الْمُقْسِطِیْنَ﴾ ای یثیبہم(۲۴۲ /۱۰۰) ٭ یہاں بھی ’’محبت ‘‘ کی تفسیر اس کے لازمی معنی(ثواب)سے کی ہے جو درست نہیں ہے،جیسا کہ پہلے گزر چکا ہے۔[1] ﴿فَسَوْفَ یَأْتِیْ اللّٰهُ بِقَوْمٍ یُحِبُّہُمْ وَیُحِبُّونَہُ۔۔﴾ قال صلی اللّٰه علیہ وسلم :ھم قوم ھذا،وأشار إلی أبی موسی الأشعری۔۔(۲۴۷ /۱۰۲) ٭ مستدرک حاکم:۲ /۳۱۳(۳۲۲۰) ﴿وَجَعَلَ مِنْہُمُ الْقِرَدَۃَ وَالْخَنَازِیْرَ وَعَبَدَ الطَّاغُوتَ۔۔﴾ [1] دیکھیے صفحہ(۳۳)