کتاب: رُشدشمارہ 06 - صفحہ 11
ڈاکٹر حافظ محمد زبیر [1] اجتماعی اجتہاد کا مفہوم: ایک ارتقائی مطالعہ Abstract The term collective Ijtihād is relatively a new term but the idea however existed in the past. The term refers to a collective effort of a group of scholars in determining the ruling of an issue from the depths and vastness of Qur’ān and Sunnah. In contemporary times, there exist numerous committees of academics worldwide that issue verdicts (Fatāwā) on modern issues; such proceedings are included in the definition of Collective Ijtihād. Some of these committees are governed by governmental institutions while others work independently. Some contemporary scholars have tried to define the term Collective Ijtihād in a more comprehensive and precise way that resulted in the inscription of approximately ten definitions with certain variations. This treatise includes an analysis and comparative study of all these definitions along with an appropriate demarcation of the term and words that demonstrate its boundaries. اگرچہ’اجتماعی اجتہاد‘ کا عمل توصحابہ اور تابعین کے دور میں ہی شروع ہو چکا تھا، لیکن اس فعل کو باقاعدہ کسی ادارے کی صورت دینے کا تصور بیسیویں صدی ہجری میں ہی صحیح معنوں میں سامنے آیا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہم دیکھتے ہیں کہ اجتماعی اجتہاد کی جتنی بھی تعریفیں بیان کی گئی ہے، وہ تقریباً بیسویں صدی ہجری کے آخری ربع ہی میں سامنے آئی ہیں اور تاحال یہ سلسلہ جاری ہے۔اجتماعی اجتہاد کا عمل اس وقت امت مسلمہ کے ایک بڑے [1] اسسٹنٹ پروفیسر، ڈیپارٹمنٹ آف ہیومینٹیز، کامساٹس انسٹی ٹیوٹ آف انفارمیشن ٹیکنالوجی، لاہور