کتاب: رُشدقرأت نمبر 2 - صفحہ 889
ڈاکٹر یاسر ابراہیم مزروعی ٭، الشیخ عمر مالم أبہ ٭٭ نظرثانی: الشیخ ابراہیم علی شحاتہ السمَنُّودی٭٭٭ ترتیب واِضافہ جات: محمد فاروق حسینوی٭٭٭٭ شیخ المقری علامہ علی محمد الضبّاع رحمہ اللہ شیخ القراء علامہ علی محمدالضباع رحمہ اللہ بیسویں صدی عیسویں میں جمہوریہ مصر کے مایہ ناز قراء میں سے ایک تھے۔ اس دور میں دنیا بھر کے مشائخ ِقراءات کی قیادت آپ کے ہاتھ میں رہی اور اِس صدی کے جمیع اساطین فن علمی طور پر آپ ہی سے فیض یاب تھے۔ آج دنیا بھر میں علم قراءات کی جو اسانید رائج ہیں ، اکثر آپ ہی کی واسطے سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تک پہنچتی ہیں ۔ اپنی زندگی میں جہاں آپ نے ہزاروں تلامذہ پیدا کیے، وہاں ان کے قلم سے سینکڑوں تصنیفات وتحقیقات بھی منصہ شہود پر موجود ہیں ۔ جس طرح سعودی عرب وغیرہ میں ’مفتی اعظم‘ کا تقرر باقاعدہ حکومت کی طرف سے ہوتا ہے، اسی طرح جمہوریہ مصر میں ’شیخ المقاری‘ کا تعین بھی حکومتی قیادت ہی کرتی ہے، جس کا تقرر تو بظاہر حکمرانوں کے ہاتھوں ہوتا ہے لیکن ایسا شخص دراصل ماہرین فن اور عوام الناس کے اعتماد کی ایک واضح علامت ہوتا ہے۔ اپنے زمانہ میں جمہوریہ مصر میں حکومتی سطح پر ان کو اس جلیل القدر منصب پر فائز کرکے شیخ القراء والمقاری المَصْریَّۃ کا لقب عطا کیا گیا۔ غالبا آپ پہلے شخص ہیں ، جنہیں عوامی اعتماد کی بنا پر یہ لقب عطا کیا گیا۔ان کے بعد اب یہ منصب مسلسل منتقل ہوتا چلا آرہا ہے۔ علامہ الضبَّاع رحمہ اللہ کی حالات زندگی پر مشتمل مضمون کو مجلس التحقیق الاسلامی، لاہور کے رکن محمد فاروق حسینوی حفظہ اللہ نے ڈاکٹر یاسر ابراہیم مزروعی حفظہ اللہ کی کتاب أحسن الأثر فی ترجمۃ إمام القرآء والمقرئین بمصر اور معروف مصری محقق قاری الشیخ عمر مالم أَبَہْ حفظہ اللہ کی مختصر بلُوغ الأمنیَّۃ اَز شیخ الضبَّاع رحمہ اللہ کی تحقیق کے مقدمہ میں ان کے حالات زندگی کی روشنی میں مرتب کرکے پیش کیا گیا ہے۔ یاد رہے کہ ڈاکٹر یاسر مزروعی ادریس العاصم حفظہ اللہ کے پاس جوتجویدوقراء ات کے مخطوط موجود ہیں ان کی فہرست میسر نہیں ہوسکی مزید تفصیل کے لیے ان سے رابطہ کیاجاسکتا ہے ۔ [ادارہ] کی کتاب کی نظرثانی عالم اسلام کے جلیل القدر عالم ِقراءات الشیخ ابراہیم علی الشحاتہ السمنُّودی رحمہ اللہ نے اپنی وفات سے چند ماہ قبل فرما دی تھی، زیر نظر مضمون بھی چونکہ بنیادی طور پر اِسی کتاب سے ماخوذ ہے، چنانچہ ہم اِسے موصوف کی نظر ثانی کے عنوان سے پیش کررہے ہیں ۔ [ادارہ] نام و نسب آپ رحمہ اللہ کا پورا نام علی بن محمد بن حسن بن ابراہیم بن عبداللہ نور الدین الشافعی ہے اور آپ رحمہ اللہ الضبَّاعکے لقب سے مشہور ہوئے۔اس لقب سے مشہور ہونے کی وجہ یہ تھی کہ آپ رحمہ اللہ کے جداعلیٰ ضباع کا شکار کرتے تھے جس [1] کویت کے نامور محقق قراءات [2] ٭ کویت کے نامور محقق قراءات [3] ٭٭ جمہوریہ مصر کے معروف قراءات [4] ٭٭٭ فاضل کلیۃ الشریعہ ، جامعہ لاہور الاسلامیہ ورکن مجلس التحقیق الاسلامی،لاہور