کتاب: ریاض الخطبات (جلد اول) - صفحہ 74
ہر زمانے میں پیمبربھی، نبی بھی آئے مصلح ملی و ملکی بھی، رشی بھی آئے حق کے جوئندہ حق کے ولی بھی آئے واقف محرم سر ازلی بھی آئے آئے دنیا میں بہت پاک مکرم بن کر کوئی آیا نا مگر رحمت عالم بن کر (جگر مراد آبادی) آخری گزارش مدحت شاہ دوسرا بیاں کروں کس طرح تنگ میرے تخیلات پست میرے تصورات محب صادق و مخلص کی ذات پر فرطِ الفت و محبت کی تاثیر یہ ہوتی ہے کہ اس کے دلِ معمور از محبت میں ہمہ وقت محبوب کے محاسن جلیلہ ، اَوصافِ حمیدہ اور فضائل محمودہ بیان کرنے کا جذبہ اور ولولہ (Devotion) موجزن رہتا ہے ۔ وہ اس بات کا بے حد متمنی اور خواہاں ہوتا ہے کہ اپنے محبوب کے ذکر کو خلوت و جلوت بحر وبر اور حضر و سفر میں بذریعہ زبان و قلم مدح و ستائش اور حمد و تعریف سے اپنی زبان کو تر رکھے ۔اسی جذبہ خیر سے سرشار ہو کر بندہ عاجز و قاصر القلم اس جامع کمالات و صفات ہستی کے چند محاسن اور اوصاف زیب قرطاس کرنے کی جسارت کی ہے۔ اللہ رب العزت اس جذبہ کو اپنی بارگاہ میں شرف قبولیت سے نوازے۔ حق بات تو یہ ہے کہ نبی مکرم جناب محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے محاسن، مناقب اور فضائل تو اس قدر ہیں کہ کئی دفتر درکارہیں لیکن میں اس دعاکےساتھ کہ ا ﷲ تعالیٰ ہمیں اس عظیم تر نعمت کی کما حقہ قدر کی توفیق عنایت فرمائے اور ہمیں اپنے اعمال پیارےنبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت طیبہ کے سانچے میں ڈھالنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین ۔ بے شک پیارے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات اللہ تعالیٰ کے بعد سب سے بڑی ذات ہے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی بات اللہ تعالیٰ کی بات ہے۔ جیسا کہ ارشاد باری تعالیٰ ہے: [1] أبو محمد عبد اللّٰه بن عبد الرحمن بن الفضل بن بَهرام بن عبد الصمد الدارمی، التميمی السمرقندی (المتوفى: 255هـ) :مسند الدارمی المعروف بـ (سنن الدارمی)،جلد1،صفحہ 164،تحقيق: حسين سليم أسد الدارانی، دار المغنی للنشر والتوزيع، المملكة العربية السعودية،الطبعة: الأولى، 1412 هـ - 2000 م،عدد الأجزاء: 4، [تعليق المحقق] إسناده منقطع عروة بن الزبير لم يدرك أبا ذر الغفاری ورجاله ثقات أبو بكر أحمد بن عمرو بن عبد الخالق بن خلاد بن عبيد اللّٰه العتكی المعروف بالبزار (المتوفى: 292هـ): مسند البزار المنشور باسم البحر الزخار،جلد9،صفحہ 436، المحقق: محفوظ الرحمن زين اللّٰه ، (حقق الأجزاء من 1 إلى 9)،وعادل بن سعد (حقق الأجزاء من 10 إلى 17)،وصبری عبد الخالق الشافعی (حقق الجزء 18)،مكتبة العلوم والحكم - المدينة المنورة،الطبعة: الأولى، (بدأت 1988م، وانتهت 2009م)،عدد الأجزاء: 18۔ أبو القاسم، هبة اللّٰه بن الحسن بن منصور الطبری الرازی اللالكائی (المتوفى: 418هـ): شرح أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة،جلد4،صفحہ 831، تحقيق: أحمد بن سعد بن حمدان الغامدی ،دار طيبة – السعودية، الطبعة: الثامنة، 1423هـ / 2003م،عدد الأجزاء: 9 أجزاء (4 مجلدات) - الجزء 9 تجده منفردا باسم: كرامات الأولياء ۔