کتاب: نیکی کا حکم دینے اور برائی سے روکنے میں خواتین کی ذمہ داری - صفحہ 149
غیر مکلف،بڑا ہو یا چھوٹا۔’‘[1] 3 انہوں نے خادمہ کو صرف سونے کی انگوٹھی اتارنے ہی کا حکم نہ دیا،بلکہ بچے کے لیے چاندی کی انگوٹھی تیار کرنے کا حکم بھی دیا۔دوران احتساب ممنوعہ چیزوں اور ناجائز باتوں سے روکتے وقت جائز چیزوں کے مہیا کرنے کی مقدور بھر کوشش کرنی چاہیے۔ ٭٭٭ (۳۳)عائشہ رضی اللہ عنہا کا مردوں سے مشابہت کرنے والی عورت پر احتساب حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے روبرو ایک ایسی عورت کا ذکر کیا گیا جو مردوں ایسے جوتے پہنتی تھی۔یہ سن کر انہوں نے اس پر نقد فرمایا۔ دلیل: امام ابوداود رحمہ اللہ نے ابن ابی ملیکہ رحمہ اللہ سے روایت نقل کی ہے کہ انہوں نے بیان کیا کہ: ((قِیْلَ لِعَائِشَۃَ رضی اللّٰه عنہا:’’إِنَّ امْرَأَۃً تَلْبَسَ النَّعَلَ۔‘‘ فَقَالَتْ:’’لَعَنَ رَسُوْلُ اللّٰهِ صلی اللّٰه علیہ وسلم الرَّجُلَۃَ مِنَ النِّسَائِ۔‘‘))[2] [1] ملاحظہ ہو : احیاء علوم الدین ۲/۳۲۷ ؛ وتنبیہ الغافلین ص۳۷۔ [2] سنن أبي داود (المطبوع مع عون المعبود) ، کتاب اللباس ، باب في لبس النساء ، رقم الحدیث ۴۰۹۳، ۱۱/۱۰۵-۱۰۶۔ شیخ البانی ؒ نے اس حدیث کو [صحیح] قرار دیا ہے ۔ (ملاحظہ ہو : صحیح سنن أبی داود ۲/۷۷۳)۔ اس سے ملتی جلتی روایت امام الحمیدی ؒ اور امام ابو یعلی ؒ نے بھی نقل کی ہے ۔(ملاحظہ ہو : مسند الحمیدي ، رقم الحدیث ۲۷۲ ، ۱/۱۳۲ ؛ ومسند أبي یعلی ، رقم الحدیث ۵۲۴(۴۸۸۰) ، ۸/۲۸۹-۲۹۰)۔