کتاب: نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے محبت اور اس کی علامتیں - صفحہ 30
ہیں۔یہ سُن کر وہ اس قدر خوش ہوئے، کہ آنکھوں سے آنسو جاری ہو گئے۔اسی واقعہ کی تفصیل ملاحظہ فرمائیے: امام بخاری نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی اہلیہ محترمہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت کی ہے، کہ انہوں نے بیان کیا: ’’فَبَیْنَمَا نَحْنُ یَوْمًا جُلُوْسٌ فِيْ بَیْتِ أَبِيْ بَکْرٍ رضی اللّٰهُ عنہ فِيْ نَحْرِ الظَّہِیْرَۃِ، قِیْلَ لِأَبِيْ بَکْرٍ: ’’ہٰذَا رَسُوْلُ اللّٰہِ صلي اللّٰهُ عليه وسلم مُتَقَنِّعًا‘‘۔ … فِيْ سَاعَۃٍ لَمْ یَکُنْ یَأْتِیْنَا فِیْہًا… فَقَالَ أَبُوْبَکْرٍ:’’فِدَائً لَّہٗ أَبِيْ وَ أُمِّيْ، وَ اللّٰہِ!مَا جَائَ بِہٖ فِيْ ہٰذِہِ السَّاعَۃِ إِلَّا أَمْرٌ۔‘‘ قَالَتْ:’’فَجَائَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلي اللّٰهُ عليه وسلم فَاسْتَأْذَنَ، فَأُذِنَ لَہٗ، فَدَخَلَ۔فَقَالَ النَّبِیُّ لِأَبِيْ بَکْرٍ رضی اللّٰهُ عنہ:’’أَخْرِجْ مَنْ عِنْدِکَ۔‘‘ فَقَالَ أَبُوْبَکْرٍ رضی اللّٰهُ عنہ:’’إِنَّمَا ہُمْ أَہْلُکُ، بِأَبِيْ أَنْتَ یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ!‘‘ قَالَ:’’فَإِنِّيْ قَدْ أُذِنَ لِيْ فِيْ الْخُرُوْجِ۔‘‘ فَقَالَ أَبُوْبَکْرٍ رضی اللّٰهُ عنہ:’’اَلصَّحَابَۃَ بِأَبِيْ أَنْتَ یَارَسُوْلَ اللّٰہِ۔‘‘ قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلي اللّٰهُ عليه وسلم:’’نَعَمْ۔‘‘[1] ’’جب ہم سورج ڈھلنے(زوال)کے وقت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے گھر بیٹھے تھے، کہ کسی نے اُن سے کہا:’’رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم سر ڈھانپے ہوئے تشریف لارہے ہیں۔‘‘ [1] صحیح البخاری، کتاب مناقب الأنصار، باب ہجرۃ النبي صلي اللّٰهُ عليه وسلم و أصحابہ إلی المدینۃ، جزء من رقم الحدیث ۳۹۰۵، ۷/۲۳۱۔