کتاب: مسنون ذکر الٰہی، دعائیں - صفحہ 325
118۔ ایک حدیث میں یہ دُعا مختصراً یوں ہے: (( اَللّٰھُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُ بِکَ مِنْ قَلْبٍ لَایَخْشَعُ، وَمِنْ دُعَائٍ لَا یُسْمَعُ وَمِنْ نَفْسٍ لَاتَشْبَعُ وَمِنْ عِلْمٍ لَا یَنْفَعُ اَعُوْذُ بِکَ مِنْ ھٰؤُلَآئِ الْاَرْبَعِ )) [1] ’’اے اللہ! میں تجھ سے بے خشوع دِل، غیر مقبول دُعا، سیر نہ ہونے والے نفس اور بے فائدہ عِلم، ان چاروں سے تیری پناہ مانگتا ہوں۔‘‘ 119۔ ایک دوسری حدیث میں اس سے بھی زیادہ اختصار ہے: (( اَللّٰھُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُ بِکَ مِنْ عِلْمٍ لَا یَنْفَعُ وَعَمَلٍ لَا یُرْفَعُ وَدُعَائٍ لَایُسْمَعُ )) ’’اے اللہ! میں تیری پناہ مانگتا ہوں: بے فائدہ علم اور غیر مقبول عمل و دُعا سے۔‘‘ [2] [1] صحیح مسلم، سُنن أبي داوٗد، سنن الترمذي، سنن النسائي، سنن ابن ماجہ، مسند أحمد، صحیح الجامع، رقم الحدیث (۱۳۰۸) سوئے حرم (۲۷۸) [2] صحیح ابنِ حبان، مسند أحمد، مستدرک حاکم، صحیح الجامع، رقم الحدیث (۱۳۰۶)