کتاب: مسنون ذکر الٰہی، دعائیں - صفحہ 105
اس نے بھی ’’اَللّٰہُ اَکْبَرُ، اَللّٰہُ اَکْبَرُ‘‘ کہا اور جب مؤذِّن نے ’’لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ‘‘ کہا اور اس نے بھی دل سے ’’لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ‘‘ کہا تو یہ (اذان کا جواب دینے والا) جنّت میں داخل ہوگیا۔‘‘ [1] شفاعتِ رسول صلی اللہ علیہ وسلم : 58۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’جس نے اذان سُن کر یہ دُعا پڑھی، اس کے لیے قیامت کے روز میری شفاعت حلال ہوگئی: (( اَللّٰھُمَّ رَبَّ ھٰذِہٖ الدَّعْوَۃِ التَّآمَّۃِ وَالصَّلَاۃِ الْقَآئِمَۃِ آتِ مُحَمَّدَنِ الْوَسِیْلَۃَ وَالْفَضِیْلَۃَ وَابْعَثْہُ مَقَامًا مَّحْمُوْدَنِ الَّذِیْ وَعَدْتَّہٗ )) [2] ’’اے اللہ! اس پوری دُعا اور قائم ہونے والی نماز کے رب! حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو مقامِ وسیلہ اور فضیلت عطا فرما اور انھیں [1] صحیح مسلم، رقم الحدیث (۳۸۵) [2] صحیح البخاري، رقم الحدیث (۶۱۴)