کتاب: مجموعہ رسائل عقیدہ(جلد1) - صفحہ 610
کے وسوسے اور نفس پرستی سے حاصل ہو۔ یہی وجہ ہے کہ وہ ہمیشہ شکوک و شبہات کا شکار رہتے ہیں اور حق کو دریافت نہیں کر پاتے۔ رب تعالیٰ نے فرمایا: ﴿ اُوْلٰٓئِکَ الَّذِیْنَ لَعَنَھُمْ اللّٰہُ فَاَصَمَّھُمْ وَاَعْمٰٓی اَبْصَارَھُمْ﴾[محمد: ۲۳] [یہی وہ لوگ ہیں جن پر اللہ کی پھٹکار ہے، اللہ نے انھیں برا بنا دیا ہے اور ان کی نگاہوں کو بے نور کر دیا ہے] دوسری جگہ ارشاد فرمایا: ﴿ وَ مَنْ یُّھِنِ اللّٰہُ فَمَالَہٗ مِنْ مُّکْرِمٍ اِنَّ اللّٰہَ یَفْعَلُ مَا یَشَآئُ﴾ [الحج: ۱۸] [جسے اللہ ذلیل کر دے تو اسے کوئی عزت نہیں دے سکتا، اللہ جو چاہتا ہے کرتا ہے] احمد بن سنان قطان رحمہ اللہ کا قول ہے: ’’لیس في الدنیا مبتدع إلا و ھو یبغض أہل الحدیث، و إذا ابتدع الرجل بدعۃ نزعت حلاوۃ الحدیث من قلبہ‘‘[1] [دنیا کا ہر بدعتی اہلِ حدیث کو نا پسند کرتا ہے، جب انسان بدعت کرنے لگتا ہے تو حدیث کی حلاوت اس کے دل سے چھن جاتی ہے] نصربن سلام فقیہ رحمہ اللہ نے فرمایا: ’’لیس شییٔ أثقل علی أھل الإلحاد ولا أبغض إلیھم من سماع الحدیث وروایتہ بإسنادہ‘‘[2] [اہلِ الحاد کے لیے سب سے مشکل اور ناپسند چیز حدیث کا سماع اور اسناد کے ساتھ اس کی روایت ہے] امام حاکم رحمہ اللہ کا بیان ہے کہ احمد بن اسحق رحمہ اللہ نے ایک آدمی سے اثناے مناظرہ کہا: ’’حدثنا فلان‘‘ [ہم سے فلاں نے بیان کیا] اس نے کہا: اسے چھوڑو! کہاں تک حدثنا چلے گا؟ احمد نے کہا: اے کافر! اٹھ بھاگ اور آج کے بعد میرے گھر کا رخ نہ کرنا۔ حاکم کا بیان ہے کہ پھر احمد میری طرف [1] أحاديث في ذم الكلام و أهله لأبي الفضل المقري (2/72) [2] أحاديث في ذم الكلام و أهله لأبي الفضل المقرى (2/73)