کتاب: خطبات سرگودھا (سیرت نبوی ص کا عہد مکی) - صفحہ 217
زریں اور طویل سلسلہ رہا جس میں خواب یکساں حقیقت کا روپ دھارلیتا۔ تاویل و تعبیر رویا کے لحاظ سے اہم ترین دارالھجرۃ کا خواب صادقہ تھا:اس کے اولین روپ میں آپ نے جو کچھ کیا اس کی تعبیر ٹھیک نشانے پر نہ بیٹھی مگر دوسری بار اس کی صحیح وقطعی تعبیر بھی دکھا دی گئی کہ نخلستان ہجرت سے مراد نخیل یثرب ہے۔ ایسے خوابوں کی تاویلات وتعبیرات کا ایک سلسلہ مکی دور میں بھی ملتا ہے۔ ان خوابوں کے علاوہ متعدد احادیث کی تاویلات نبوی کا ایک پورا ذریں سلسلہ ہے جس کی ایک جھلک شاہ ولی اللہ دہلوی نے اپنی تصنیف لطیف تاویل الاحادیث میں دکھائی ہے۔ اس کا ایک مفصل و مدلل مطالعہ علوم محمدی مکی کا ایک نیا جہاں دنیا کے سنا ہے پیش کرے گا۔ (173)۔ دیگر علوم نبوی مکی دور میں ان کے علاوہ دوسرے علوم اسلام بھی تھے اور ان کی خاصی اہمیت بھی۔ ان پر ہی بعد میں مدنی دور میں ان علوم کا ارتقاء ہوا۔ ان میں شامل تھے:اصول سیاسیات، اقتدار سماجیات نفسیات معاشیات اسلامی اورعلوم تہذیب وتمدن کا ایک وسیع ترجہان دانش تھا۔ ان کے تجزیہ وتحلیل اورپیشکش کا یہاں موقعہ نہیں ہے۔ وہ ایک عالم ومحقق اور ایک اکادمی اسلامیات کے بس کا بھی نہیں ہے۔ ان کے مطالعہ وتحقیق کے لیے عمر میں اور زمانے اور محققین وادارے درکار ہیں۔