کتاب: جھوٹی بشارتیں - صفحہ 69
سوال: فضلیۃ الشیخ !اس ٹکٹ کے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے؟[1] یک طرفہ سفر شناختی کارڈ: 1)نام:ابن آدم(انسان) 2)جنسیت:مٹی کا بنا ہوا 3)ایڈریس: زمین 4) اڑان بھرنے کی جگہ : دنیا کی زندگی ۔ 5) پہنچنے کا مقام: دارِ آخرت ۔ 6):سفر کا وقت: ﴿وَمَا تَدْرِیْ نَفْسٌ مَّاذَا تَکْسِبُ غَداً وَمَا تَدْرِیْ نَفْسٌ بِأَیِّ أَرْضٍ تَمُوتُ﴾ ’’کوئی بھی نہیں جانتا کہ کل کیا کچھ کرے گا نہ کسی کویہ معلوم ہے کہ کس زمین میں مرے گا۔‘‘ 7)حاضری کا وقت:﴿لِکُلِّ أَجَلٍ کِتَابٌ﴾ ’’ہر مقررہ وعدے کی ایک کتاب(وقت مقرر ہے) ہے ۔‘‘ 4جو سامان لے جانے کی اجازت ہے: 1) 2میٹر سفید کپڑا 2)نیک اعمال۔ 3)نیک اولاد کی دعا 4)نفع بخش علم ان کے علاوہ کوئی بھی چیز لے جانے کی اجازت نہیں ہوگی۔ خوشگوار سفر کی شرائط : مسافر حضرات سے گزارش ہیکہ کتاب اللہ و سنت رسول اللہ میں وارد ہونے والی تعلیمات کو بجائے لائیں ‘ مثال کے طور پر: 1)اللہ تعالیٰ کی محبت و اطاعت اور اس کی خشیت ۔ 2)موت کا کثرت سے ذکر کرنا۔ 3)اس بات کو یاد رکھنا کہ آخرت میں ہمارا ٹھکانہ یا تو جہنم ہو گا یا جنت۔ 4)اس سفر کے لیے کھانا پینا اور لباس حلال کا ہونا چاہیے۔ مزید تفصیلات کے لیے اللہ کے کلام اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت کو فون کریں ۔ نوٹ:مزید معلومات کے لیے اس (فری) نمبر پر رابطہ کیجیے:43442۔پہلے سے بکنگ کی کوئی ضرورت نہیں ۔ [1] [فتاوی العقیدہ از محمد بن صالح العثیمین رحمۃ اللہ علیہ ص 640۔641ـ642]