کتاب: جھوٹی بشارتیں - صفحہ 145
سماحۃ الشیخ الامام عبدالعزیز بن عبداللہ بن باز رحمۃ اللہ علیہ بسم ا للّٰه والحمد للّٰه وصلی ا للّٰه وسلم علی رسولہ وعلی آلہ واصحابہ ومن اھتدی بھدی۔أما بعد: [1] مجھے یہ اطلاع ملی ہے کہ بعض جاہل لوگ ایک پمفلٹ پھیلارہے ہیں جو کہ ایک من گھڑت حدیث پر مشتمل ہے ۔ اس موضوع و من گھڑت حدیث[2] کی عبارت کچھ یوں ہے: ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’جب رمضان میں ایک چیخ سنائی دے گی جو کہ شوال تک پھیل جائے گی۔ اور ذو القعدہ میں بعض قبیلے جدا ہوں گے۔اور ذو الحجہ میں خون بہائے جائیں گے ۔اور محرم میں ……اور تمہیں کیا معلوم کہ محرم کیا ہے؟(اور اس بات کو تین مرتبہ دہرایا)ہائے افسوس کہ اس مبارک مہینے میں ہزاروں لوگ اندھا دھند قتل کر دیے جائیں گے۔ہم نے پوچھا کہ اے اللہ کے رسول وہ چیخ کیسی چیخ ہو گی؟آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:وہ چیخ پندرہ رمضان اور جمعہ کی رات کو واقع ہو گی۔اس کی آواز سے سوتے ہوئے لوگ ہڑبڑا کر اٹھ جائیں گے۔اور جو لوگ کھڑے ہوں گے وہ اس چیخ کی ہیبت سے بیٹھ جائیں گے۔جوان عورتیں اپنے اپنے گھروں سے باہر نکل آئیں گی۔اور اس سال سردی بہت زیادہ بڑھ جائے گی اور کثرت سے زلزلے آئیں گے۔اگر کسی سال رمضان کی پندرہویں رات کو جمعہ آجائے تو اس دن فجر کی نماز پڑھ کر اپنے گھروں میں داخل ہو جانا ،اپنے دروازوں کو بند کر لینا، اپنے آپ کو چادرسے ڈھانپ لینااور کانوں کو بند کر لینا ،اور جب تم چیخ سنو توفورا سجدے میں گر جانا اور یوں کہنا سبحان القدوس، سبحان القدوس،ربنا القدوس۔پاک ہے اللہ ۔ پاک ہے اللہ،ہمارا رب بہت مقدس ہے۔جو اس چیخ کو سننے کے بعدایسا کرے گا وہ کامیاب ہو جائے گا اور جو ایسا نہیں کرے گا وہ ہلاک ہو جائے گا‘‘۔ جواب : اس حدیث کی کوئی سند نہیں ہے بلکہ یہ حدیث جھوٹ اور باطل ہے۔کیونکہ بہت سے ایسے رمضان گزرے جس میں جمعہ پندرھویں رمضان کو آیا لیکن کوئی بھی چیخ نہیں سنائی دی۔اس پمفلٹ میں جو کچھ اس دجال نے ذکر کیا ہے ‘ ایسا کچھ [1] [مجموع فتاوی ومقالات متنوعہ سماحۃ الشیخ الامام عبدالعزیز بن عبداللہ بن باز رحمۃ اللہ علیہ ج /26ص339] [2] [الموضوعات ابن جوزی ج/3ص191,192، اللالی المصنوعہ فی الاحادیث الموضوعہ ج /2ص388,389الاباطیل والمناکیروالصحاح والمشاھیر ص468] نیز دیکھیے [موسوعۃ الاحادیث والاثار الضعیفہ والموضوعہ ج /12ص32,33]