کتاب: جھوٹی بشارتیں - صفحہ 100
زہر میں اسرافیل نازل ہوئے پس اللہ تعالی نے مجھے اپنی عزت اور قدرت سے آرام دے دیا ہے۔‘‘ اس دعاکے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے؟ جواب: [1] وعلیکم السلام ورحمۃ ا للّٰه و برکاتہ!امابعد: اس دعا کی کوئی حقیقت نہیں ۔ہم نے کبھی بھی یہ دعا احادیث کی کتابوں میں نہیں پڑھی ۔سانپ اور بچھو کے زہر سے بچنے کے لیے شرعی دم پڑھنا چاہیے جس میں سورۃالفاتحہ اور دوسری آیات قرآن و حدیث سے وارد ہیں ۔ اس کے بعد اسے اللہ کے حکم سے کوئی چیز نقصان نہیں پہنچا سکتی۔جہاں تک سانپ اور بچھو کے نہ مارنے کی بات ہے؛ تو ایسا کرنا جائز نہیں ؛کیونکہ ان کے زندہ چھوڑ دینے میں ضرر رسانی ہے ۔ آپ کو چاہیے کہ ان کو مار ڈالیں ۔خواہ حرم میں [2] اور احرام کی حالت میں بھی ہوں ‘ انہیں مار نا جائز ہے۔ نیز مسلمان کو چاہیے کہ مخلوق کے شر سے اللہ تعالیٰ کے کلمات کی پناہ میں آئے‘ تو اللہ کے حکم سے اسے کوئی چیز نقصان نہیں دے سکے گی۔ وصلی ا للّٰه علی نبینا محمد وآلہ وصحبہ أجمعین۔ [1] نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’خمس قتلھن حلال فی الحرم: الحیۃ ، والعقرب، والحأۃ، والفأرۃ،والکلب العقور‘‘۔’’پانچ جانوروں کو حرم میں مارنا بھی جائز ہے:سانپ، بچھو، چیل،چوہا اور چتکبرا کتا اور کوا‘‘۔اسے ابو داؤد نے روایت کیا ہے اور البانی نے اسے صحیح کہا ہے۔دیکھیے:[الارواء حدیث نمبر1036]،[ صحیح الجامع حدیث نمبر3245]۔اور احمدمیں یہ روایت اس طرح ہے: ’’خمس کلھن فاسقہ یقتلھن المحرم ، ویقتلن فی الحرم:الفأرۃ، والعقرب، والحیۃ، والکلب العقور، والغراب‘‘۔ ’’پانچ جانور فاسق ہیں ۔انہیں حالتِ احرام اور حرم میں مارا جاسکتا ہے:چوہا، بچھو، سانپ، چتکبرا کتا اور کوا‘‘۔دیکھیے[ صحیح الجامع حدیث نمبر3246] [الارواء حدیث نمبر1036] [2] [فتاوی شرعیہ فی المسائل الطبیہ عبداللّٰہ بن جبرین حفظہ اللہ ص 48]