کتاب: جنت و جہنم کے نظارے - صفحہ 216
اور وہ اس میں ہمیشہ ہمیش رہیں گے، اللہ تعالیٰ ہمیں انہی میں سے بنائے،آمین۔[1] ۲- جہنم کے درخت اور ان کے سائے: اللہ عزوجل کا ارشاد ہے: ﴿ إِنَّ شَجَرَتَ الزَّقُّومِ ﴿٤٣﴾ طَعَامُ الْأَثِيمِ ﴿٤٤﴾ كَالْمُهْلِ يَغْلِي فِي الْبُطُونِ ﴿٤٥﴾ كَغَلْيِ الْحَمِيمِ ﴾[2] بیشک زقوم(تھوہڑ) کا درخت۔ گناہ گار کا کھانا ہے۔ جو مثل تلچھٹ کے ہے اور پیٹ میں کھولتا رہتا ہے۔ مثل تیز گرم پانی کے۔ نیزاللہ عزوجل کا ارشاد ہے: ﴿ثُمَّ إِنَّكُمْ أَيُّهَا الضَّالُّونَ الْمُكَذِّبُونَ ﴿٥١﴾ لَآكِلُونَ مِن شَجَرٍ مِّن زَقُّومٍ ﴿٥٢﴾ فَمَالِئُونَ مِنْهَا الْبُطُونَ ﴿٥٣﴾ فَشَارِبُونَ عَلَيْهِ مِنَ [1] دیکھئے: فتح الباری، ۵/۲۷۔ [2] سورۃ الدخان: ۴۳ تا ۴۶۔