کتاب: جنت و جہنم کے نظارے - صفحہ 137
۲- جہنمیوں میں سب سے ہلکے عذاب میں مبتلا شخص، جہنم کی گرمی کی شدت اور جہنمیوں کا عذاب میں کم وبیش ہونا: نعمان بن بشیر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے ‘وہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: (( ان أھــــــون أھل النار عذاباً یوم القیامۃ رجل علی أخمص قدمیہ جمرتان یغلي منھما دماغہ کما یغلي المرجل المقمقم))( [1]) ([2]) بیشک قیامت کے روز سب سے ہلکے عذاب میں مبتلا شخص وہ ہوگا جس کے پیروں کے تلوے تلے آگ کے دو انگارے ہوں گے جن [1] ’’مرجل‘‘تانبے کی ہانڈی کو کہا جاتا ہے، اور’’مقمقم‘‘ عطر فروشوں کا ایک برتن ہے، اور کہا گیا ہے کہ یہ تانبہ سے بنا ہوا تنگ منہ کاایک برتن ہے جس میں پانی کو جوش دیا جاتا ہے،نیز عام طور پر ہر قسم کے برتن کوبھی ’’مرجل‘‘کہا جاتا ہے جس میں پانی گر م کیا جائے، خواہ کسی بھی دھات کا ہو، دیکھئے: فتح الباری، ۱۱/۴۳۰، ۴۳۱۔ [2] صحیح بخاری مع فتح الباری، ۱۱/۴۱۷، حدیث (۶۵۶۱ و۶۵۶۲) و صحیح مسلم ،۱/۱۹۶، حدیث(۲۱۳)۔