کتاب: جنازے کے مسائل - صفحہ 72
حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ’’بیشتر عذاب قبر پیشاب (میں احتیاط نہ کرنے ) کی وجہ سے ہوتا ہے۔‘‘ اسے احمد نے روایت کیا ہے۔ عَنْ اَبِیْ ہُرَیْرَۃَ رضی اللّٰه عنہ قَالَ : کَانَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلي اللّٰه عليه وسلم یَدْعُوْ ((أَللّٰہُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُ بِکَ مِنْ عَذَابِ الْقَبْرِ وَ مِنْ عَذَابِ النَّارِ وَ مِنْ فِتْنَۃِ الْمَحْیَا وَالْمَمَاتِ وَ مِنْ فِتْنَۃِ الْمَسِیْحِ الدَّجَّالِ )) رَوَاہُ الْبُخَارِیُّ[1] حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم یہ دعا مانگا کرتے تھے’’یا اللہ ! میں تجھ سے قبر اور جہنم کے عذاب، زندگی اور موت کی آزمائش اور مسیح دجال کے فتنے سے پناہ مانگتا ہوں۔‘‘ اسے بخاری نے روایت کیا ہے۔ عَنْ اَبِیْ سَعِیْدٍ رضی اللّٰه عنہ قَالَ : دَخَلَ النَّبِیُّ صلي اللّٰه عليه وسلم مُصَلاَّہُ فَرَأَی نَاسًا کَأَنَّہُمْ یَکْتَثِرُوْنَ قَالَ ((اَمَا اَنَّکُمْ لَوْ اَکْثَرْتُمْ ذِکْرَہاَذِمِ اللَّذَّاتِ لَشَغَلَکُمْ عَمَّا أَرََی الْمَوْتَ فَاکْثِرُوْا مِنْ ذِکْرِ ہَاذِمِ اللَّذَّاتِ الْمَوْتِ فَاِنَّہٗ لَمْ یَأْتِ عَلَی الْقَبْرِ یَوْمٌ اِلاَّ تَکَلَّمَ فِیْہِ ، فَیَقُوْلُ اَنَا بَیْتُ الْغُرْبَۃِ وَ اَنَا بَیْتُ الْوَحْدَۃِ وَ اَنَا بَیْتُ التُّرَابِ وَ اَنَا بَیْتُ الدُّوْدِ وَ اِذَا دُفِنَ الْعَبْدُ الْمُؤْمِنُ قَالَ لَہُ الْقَبْرُ مَرْحَبًا وَ اَہْلاً اَمَا اِنْ کُنْتَ لَاَحَبَّ مِنْ یَمْشِیْ عَلٰی ظَہْرِیْ اِلَیَّ فَاِذْ وُلَّیْتُکَ الْیَوْمَ وَ صِرْتَ اِلَیَّ فَسَتَرٰی صَنِیْعِیْ بِکَ قَالَ فَیَتَّسِعُ لَہٗ مَدَّ بَصَرِہٖ وَ یُفْتَحُ لَہٗ بَابٌ اِلَی الْجَنَّۃِ ،وَ اِذَا دُفِنَ الْعَبْدُ الْفَاجِرُ اَوِ الْکَافِرُ قَالَ لَہُ : الْقَبْرُ لاَ مَرْحَبًا وَ لاَ أَہْلاً اَمَا اِنْ کُنْتَ لَاَبْغَضَ مَنْ یَمْشِیْ عَلٰی ظَہْرِیْ اِلَیَّ فَاِذْ وُلَّیْتُکَ الْیَوْمَ وَ صِرْتَ اِلَیَّ فَسَتَرٰی صَنِیْعِیْ بِکَ قَالَ فَیَلْتَئِمُ عَلَیْہِ حَتّٰی یَلْتَقِیَ عَلَیْہِ وَ تَخْتَلِفَ اَضْلاَعُہٗ )) قَالَ وَ قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلي اللّٰه عليه وسلم ((بِاَصَابِعِہٖ فَاَدْخَلَ بَعْضُہَا فِیْ جَوْفِ بَعْضٍ قَالَ وَ یُقَیَّضُ اللّٰہُ لَہٗ سَبْعُوْنَ تِنِّیْنًا لَوْ اَنَّ وَاحِدًا مِنْہَا نَفَخَ فِی الْاَرْضِ مَا اَنْبَتَتْ شَیْئًا مَا بَقِیَتِ الدُّنْیَا فَیَنْہَشْنَہٗ وَ یَخْدِشْنَہٗ حَتّٰی یُفْضٰی بِہٖ اِلَی الْحِسَابِ )) قَالَ وَ قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلي اللّٰه عليه وسلم ((اِنَّمَا الْقَبْرُ رَوْضَۃٌ مِنْ رِیَاضِ الْجَنَّۃِ اَوْ حُفْرَۃٌ مِنْ حُفْرِ النَّارِ)) رَوَاہُ التِّرْمِذِیُّ[2] حضرت ابو سعید رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نماز کے لئے تشریف لائے اور لوگوں کو ہنستے دیکھا تو فرمایا ’’خبردار! اگر تم لذتوں کو مٹانے والی چیز ،یعنی موت، کا بکثرت ذکر کرتے تو اس طرح نہ ہنستے۔لذتوں کو مٹانے والی چیز ’’موت‘‘ کو کثرت سے یاد کیا کرو۔ سنو! قبر ہر روزز یہ پکارتی ہے ’’میں غربت کا گھر ہوں ، میں تنہائی کا گھر ہوں ، میں مٹی کا گھر ہوں ، میں کیڑے مکوڑوں کا گھر ہوں۔‘‘ جب مومن آدمی دفن کیا جاتا ہے تو قبر کہتی ہے ’’تجھے خوش آمدید ہو، مجھ پر چلنے والے لوگوں میں سے تو مجھے سب سے زیادہ عزیز تھا آج جب کہ تجھے بے بس کرکے میرے حوالے کر دیا گیا ہے تو میرا حسن سلوک دیکھ لے گا۔‘‘ چنانچہ قبر [1] مختصر صحیح بخاری ، للزبیدی ، رقم الحدیث693 [2] ابواب صفۃ القیامۃ