کتاب: اسلام میں تصور مزاح اورمسکراہٹیں - صفحہ 98
’’ گرم چیزیں۔‘‘ مریض نے سوالیہ نظروں سے حکیم صاحب کی طرف دیکھا۔ اس سے پہلے کہ حکیم صاحب کچھ کہیں، فراق صاحب جلدی سے بول پڑے: ’’ حی ہاں! گرم چیزیں مثلاً آگ۔‘‘ ہیثم سے مروی ہے کہ ایک شخص نےایک قوم کے پاس اپنا رشتہ بھیجا انہوں نے اس سے ذریعہ معاش دریافت کیا تو اس نے چوپاؤں کی تجارت بیان کیا تو انہوں نے نکاح کردیا، اس کے بعد جب اس سے پوچھا تو معلوم ہوا کہ وہ بلیاں فروخت کیا کرتا ہے، اس پر جھگڑا ہوا اور یہ مقدمہ قاضی شریح کے سامنے پیش کیا گیا قاضی صاحب نے فیصلہ کیہ کہ دواب (یعنی چوپایہ) کا اطلاق بلیوں پر بھی ہو سکتا ہے اور نکاح نافذ قرار دیا۔ (کتاب الاذکیا، از امام جوزی رحمتہ اللہ علیہ) مرزا غلام احمد قادیانی نے اپنی جماعت سے چندہ جمع کیا تھا ، چنانچہ مرزا نے ایک کتاب اور لکھ کر ہمیشہ کے لیے بریک لگادی قادیانیوں نے مرزا سے کہا کہ آپ نے تو پچاس کتابوں کو جمع کیا تھا، چنانچہ مرزا نے ایک کتاب اور لکھ کر ہمیشہ کے لیے بریک لگادی قادیانیوں نے پھر واویلہ کرنا شروع کردیا، مرزا تنگ آکر بولا پانچ اور پچاس میں صرف ایک صفر کا فرق ہی تو ہے اور صفر کی کوئی قیمت نہیں ہوتی۔