کتاب: اسلام میں تصور مزاح اورمسکراہٹیں - صفحہ 74
خواجہ حسن نظامی نے ایک مرتبہ اپنے اخبار "منادی" میں لکھا کہ میں ڈاکٹر اقبال کو ہندوستان کا عظیم شاعر نہیں سمجھتا۔ انہی دنوں ڈاکٹر اقبال کے گھٹنوں میں درد ہو گیا۔ خواجہ صاحب نے انہیں اپنا "روغن فاسفورس" بھیجا۔ جس سے انہیں افاقہ ہو گیا۔ انہوں نے خواجہ صاحب کو خط لکھا کہ "آپ کے روغن سے افاقہ ہوا ہے۔" خواجہ حسن نظامی نے وہ خط اپنے اخبار "منادی" میں شائع کردیا کہ اس تیل کے متعلق شاع اعظم ڈاکٹر اقبال کی کیا رائے ہے تو ڈاکٹر اقبال نے "منادی" اخبار پڑھ کر کہا کہ "شکر ہے خواجہ صاحب کے روغن فاسفورس نے مجھے شاعراعظم تو بنا دیا۔" ابن ہاص ایک مرتبہ باغ میں گیا تو اس کے منہ میں کہیں سے کڑواہٹ پہنچ گئی تو اس نے پیاز سرکے کے ساتھ کھانے کا ارادہ کیا تاکہ کڑواہٹ دور کرلے۔ اس نے مالی کو کہا: مالی کے پاس پیاز اور سرکہ نہ تھا۔ اس نے کہا کہ تونے پیاز کو سرکہ کے تو نے پیاز کو سرکہ کے ساتھ کیوں نہیں اگایا؟(اخبار الحمقیٰ والمغفلین از حافظ جمال الدین ابو الفرج عبد الرحمن ابن الجوزی رحمۃ اللہ علیہ) ابن النسوی کے بارے میں منقول ہے کہ ان کے سامنے دو آدمی لائے گئے جن پر چوری کا الزام تھا۔ انہوں نے ان کو اپنے سامنے کھڑا کیا۔ پھر ملازموں سے پینے کے لئے پانی مانگا۔ جب پانی آگیا تو اس کو پینا شروع کیا۔ پھر قصدا اپنے ہاتھ سے گلاس چھوڑ دیا جو گر کر ٹوٹ گیا۔ ان میں ایک شخص اس کے اچانک گرنے اور ٹوٹنے سے گبھرا گیا اور دوسرا اسی طرح کھڑا رہا۔ اس گبھرا جانے والے شخص کو کہہ دیا گیا کہ چلا جائے اور دوسرے کو حکم دیا کہ مسروقہ مال واپس کر۔ ان سے پوچھا گیا کہ