کتاب: اسلام میں تصور مزاح اورمسکراہٹیں - صفحہ 108
کچھ عرصہ بعد وہ چند صحافیوں سے باتیں کر رہے تھے تو ایک صحافی نے پوچھا:  "آپ نے وعدہ کیا تھا کہ بہار کی سڑکیں ایسے بنا دوں گا جیسے ہیما مالنی کے گال۔۔۔۔؟" جواب میں لالو بولے: "ہاں کہا تھا۔" اس پر صحافی کہنے لگا: "شاید آپ نے سڑکیں دیکھی ہی نہیں جن میں گڑھے پڑے ہوئے ہیں۔" جواب میں لالو پرساد یادو نے برجستہ کہا: "یوں لگتا ہے تم نے آج تک ہیما مالنی کے گال نہیں دیکھے۔" (مزاحیات کا انسائیکلو پیڈیا)   ابوالحسن علی بن منصور جلسی سے مروی ہے کہ میں سیف الدولہ کی مجلس میں حاضر رہتا وہ ایک مرتبہ کسی دشمن پر فتح پا کر واپس آیا تو میں وہاں حاضر ہوا تو شعراء بھی آئے تاکہ اسے مبارک باد دیں تو ایک شخص نے آ کر اسے شعر سنایا: وکانوا کفار و سو سوا خلف خائط وانت کسنور علیهم تسلقا "وہ چوہوں کی طرح دیوار کے پیچھے بندھے ہوئے تھے اور تو بلی کی طرح ان پر جھپٹ پڑا۔" سیف الدولہ نے اس کو باہر نکالنے کا حکم دیا، اسے نکال دیا گیا۔ وہ دروازے