کتاب: اسلام میں دولت کے مصارف - صفحہ 76
فرمایا کہ تم نےجس اولیت اورفضیلت کاذکرکیاہےاس سےمیں بخوبی واقف ہوں مگریہ ایسی چیز ہےجس کاثواب اللہ تعالی عطافرمائےگا۔ یہ معاش کامعاملہ ہے۔اس میں مساوات برتناترجیحی سلوک کرنےسےبہترہے اوراس مساوات کامطلب یہ تھاکہ ہرشخص کواس کی خدمات کالحاظ رکھنےکےبجائےاس کی ضروریات کالحاظ رکھ کردیاجائے۔ اس مساوات پرعمل ہوتارہااورجیسےجیسےآمدنی بڑھتی گئی فراخی اورخوشحالی سارےمسلمانوں کی یکساں فیض یاب کرتی رہی تاآنکہ حضرت عمررضی اللہ تعالی عنہ بن خطاب کادورآیاوہ اب بھی اپنےمؤقف پرقائم تھےکہ’’جس نےرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کےخلاف جنگ کی ہےاسےمیں ان لوگوں کےمساوی کبھی قرارنہیں دےسکتاجوآپ کےساتھ ہوکرلڑےہیں۔،، لہذاآپ نےاپنی پالیسی پرعمل کیااوراہل مدینہ کےوظائف جس نسبت سےآپ نےمقررکئےان کی تفصیل کچھ اس طرح سےہے: حضرت عمررضی اللہ تعالی عنہ کےمقررکردہ وظائف 1۔ازواج مطہرات(بوجہ قرابت)                           فی کس بارہ ہزار  درہم       سالانہ 2۔مہاجرین الاولین                                              فی کس پانچ ہزار  درہم       سالانہ 3۔ انصار                                                           فی کس تین ہزار درہم    سالانہ   4۔بدری صحابہ (مہاجریاانصار)                                فی کس پانچ ہزار درہم       سالانہ  5۔ حبشہ کےمہاجراورجنگ احد میں شریک                فی کس چار ہزار درہم       سالانہ