کتاب: اجتماعی نظام - صفحہ 816
کیا عورت اپنے چہرے سے بال اتار سکتی ہے؟ السلام علیکم ورحمة اللہ وبرکاتہ علی  پو ر سے  اسرا ر  احمد  سوال کر تے ہیں  کہ حدیث  میں عورت  کے لیے  ما تھے  کے  نو چنے  کی مما نعت  آئی  ہے کیا عورت  مو نچھوں  کے بال  اتا ر  سکتی ہے ؟  کیوں  کہ اس جگہ  با ل  بد نما  لگتے ہیں  نیز  کیا غیر  ضروری  با لو ں  کی صفا ئی  کے بعد  غسل  کر نا  لا ز می  ہے ؟  الجواب بعون الوہاب بشرط صحة السؤال وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاتہ! الحمد للہ، والصلاة والسلام علیٰ رسول اللہ، أما بعد! زما نہ جا ہلیت  میں عورتیں  اپنے حسن  کو نکھا ر نے  کے لیے  بہت  سے مصنو عی  اور غیر  فطری  امو ر  سر انجا م  دیتی تھیں  چنا نچہ  ایسا کر نا  دین اسلا م  کے مزا ج  کے خلا ف  تھا لہذا  رسو ل اللہ  ﷺ   نے ان  تمام  امور  پر  پا بندی  لگا تے  ہو ئے  فر ما یا :" اللہ تعا لیٰ  نے  ایسی  عورتوں  پر لعنت  فر ما ئی  ہے جو  سر مہ  بھر نے  اور بھروا نے  والی  ہیں  غیر  ابرو  کے بال  نو چنے  والی حسن  کی خا طر  دا نتوں  کے در میا ن  فا صلہ  کر نے والی  اور اللہ  کی سا خت  کو تبدیل  کر نے والی  ہیں ۔(صحیح بخاری) اس حدیث  کی وضا حت  کر تے ہو ئے ابن جر یری  طبری   رحمۃ اللہ علیہ  لکھتے ہیں  کہ عورت  کو اپنی سا خت  و خلقت تبد یل  کر نا  جا ئز نہیں  ہے البتہ  کسی تکلیف  کے پیش نظر  تبدیلی  لا ئی جا سکتی ہے اسی طرح  اگر عورت  کے چہر ے  پر داڑھی  آجا ئے  یا مو نچھیں  اگ  آئیں  تو  ان کا نو چنا بھی  جا ئز نہیں ہے ۔(فتح البا ری :10/377) امام نو وی  رحمۃ اللہ علیہ   اس کا تعا قب  کر تے ہو ئے  لکھتے ہیں  :" حسن  کی خا طر  ابرو  کے با ل  نو چنے  حرا م ہیں  تا ہم  اگر عورت  کی دا ڑھی  یا مو نچھیں اگ آئیں  تو ان با لوں  کو زائل  کر نا  حرا م نہیں  ہے بلکہ ہما ر ے  نز د یک  مستحب  ہے ۔(شرح مسلم :14/106اطبع  مصر ) حا فظ  ابن حجر  رحمۃ اللہ علیہ   نے اس پر  یہ شر ط  لگا ئی  ہے کہ ایسا  کر نے  سے پہلے اپنے خا وند  سے اجا زت  لی جا ئے ،(فتح البا ر ی) ہما ر ے نز دیک  اس طرح  کی پا بند ی  لگا نا  درست نہیں  کیوں  کہ اس سے ایک تو عورتوں  کی نسوانیت  مجروح  ہو تی ہے  پھر  یہ  پا بندی اس حدیث  کی زد  میں بھی آتی ہے جس  میں رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے عو رتوں  کو مردوں  جیسی  شکل و  شبا ہت  اختیا ر  کر نے  سے منع  فر ما یا  ہے اس لیے  مصلحت  کا تقا ضا  یہی  ہے کہ عورتوں  کے لیے مو نچھوں  وغیرہ  کا زائل کر دینا  جا ئز  ہے اور اس میں شر عاً کو ئی قبا حت  نہیں  ہے نیز  غیر ضروری بالوں کی صفا ئی  کے بعد  غسل کر نا  ضروری نہیں کیوں یہ با ل پلید  نہیں ہیں البتہ  صفا ئی  اور نظا فت  کے پیش  نظر  غسل کر لیا جا ئے  تو بہتر ہے ۔(واللہ اعلم ) ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب فتاویٰ اصحاب الحدیث ج1ص488