کتاب: اجتماعی نظام - صفحہ 810
شرعی پردہ کرنے والے کوملامت کانشانہ بنانا السلام علیکم ورحمة اللہ وبرکاتہ کوئی مرد یا عورت میرا اپنی بیوی پرحجاب کی پابندی کی وجہ سے مجھ سےبغض رکھے اور وہ عورت مجھےکہے کہ تو صوفی ہے رشتہ داروں سےپردہ کرانامناسب نہیں اور مجھےملامت کرتی ہے تو میرااس سے بغض  رکھنا جائزہے یانہیں؟۔  الجواب بعون الوہاب بشرط صحة السؤال وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاتہ! الحمد للہ، والصلاة والسلام علیٰ رسول اللہ، أما بعد اگر معاملہ ایسا ہے تو پہلے تجھ پر لازم ہے اس مرد اور ملازمت کرنے والی عورت کو نصیحت کریں اور حجاب کے بارے میں اسلامی حکم واضح کریں اگر توبہ کر لیں تو تمہارے دینی بھائی ہیں ‘اور مسلمان سے قطع تعلق جائزنہیں اور اگر اس کبیرہ گناہ کا علم ہوتے ہوئے اپنی حرکت پر اصرار کریں تو اللہ کے لیے ان سے بغض رکھنا اور ان سے قطع تعلق کرنا فرض ہے ۔ اسی طرح ان کے لیے اللہ تعالیٰ سے ان کی ہدایت کی دعا بھی کرتے رہیں تا کہ وہ اس حق سے پھیرنے والے عقیدے سے رجوع کریں حجاب اہم حکم ہے اور قرآن کریم نے مختلف مقامات پر اس کی اہمیت کی طرف اشارہ کیا ہے اور اس لیے بھی کہ پردہ ترک کرنے کا جو فساد ہے اسے اللہ ہی بہتر جانتا ہے اسی کی وجہ سے عزتوں کے پردے چاک ہوئے ‘ اسی کی وجہ سے نوجوان لڑکے لڑکیاں ذلت ورسوائیوں کے گڑھے میں گرے ۔اور اس کے ساتھ زانی اور بدکار خوش ہوئے اور اسی کے سبب قہار جبار اللہ کا غضب نازل ہوا اور یہی مختلف النوع ہلاکتوں بر بادیوں کا سبب بنا ۔ ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب فتاویٰ الدین الخالص ج1ص102