کتاب: اجتماعی نظام - صفحہ 1528
(282) ساس کے ساتھ زنا کرنے پر بیوی حرام نہیں ہوتی السلام علیکم ورحمة اللہ وبرکاتہ کیا فرماتے ہیں علمائے دین و مفتیان  کرام اس مسئلہ کے  بارے میں کہ میرے خاوند نے میری والدہ کے ساتھ زنا کر لیا تو مولوی حضرات نے فتویٰ دیا کہ تمہارا نکاح ٹوٹ گیا ہے تو اپنے خاوند پر حرام ہوگئی ہے ،اس کے بعد میرے خاوند نے مجھے زبانی اور تحریری طلاق دے دی ،طلاق کے تین ماہ بعد میں نے ایک دوسرے آدمی سے نکاح  کر لیا۔عرصہ ۴/۲سال گزرنے کے بعد اس نے بھی مجھے طلاق دے دی ۔اس کے نطفہ سے  ایک بچہ  ہے جس کی عمر ۴/۲سال ہے وہ بھی میرے پاس ہے ۔طلاق دی کو ۴/۱ ماہ کا عرصہ ہوگیا ہے ۔اب میں اپنے پہلے خاوند کی طرف جانا چاہتی ہوں یعنی پہلے خاوند سے نکاح کرنا چاہتی ہوںمیرے لئے شریعت میں کیا حکم ہے ؟فتویٰ دے کر ثواب دارین حاصل فرمائیں ۔(سائلہ فاطمہ بیگم گرین ٹاؤن لاہور) الجواب بعون الوہاب بشرط صحة السؤال وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاتہ! الحمد للہ، والصلاة والسلام علیٰ رسول اللہ، أما بعد! صورت مسئولہ  میں بشرط صحت  سوال  قرآن مجید میں  حُرِِمَت عَلَیکُم اُمھٰتُکم وبَنَاتکُم سے لے کر وَالمُحصَناتُ مِن النساءِ اِلا ماَ مَلکت ایمانُکم تک پندرہ رشتے  حرام کئے گئے ہیں بیوی کی والدہ ،یعنی اپنی ساس  سے بدکاری  کرنے کی صورت میں بیوی  کو ان میں ذکر نہیں کیا بلکہ ان حرام رشتوں کے ذکر کے بعد فرمایا اُ حلَ لکم ماوَرَاءَ ذَالِکم سورۃ النساء آیت ۲۴ رشتوں کے علاوہ عورتیں تمہارے لئے حلال کردی گئیں ہیں  معلوم ہوا کہ ساس سے زنا کرنے پر زوجہ حرام نہیں ہوتی ۔جمہور علماء کا یہی مذہب ہےہاں حنفیہ کے نزدیک بیوی حرا م ہوجاتی ہے کیونکہ ان کے نزدیک جیسے کسی عورت سے نکاح کرنے سے اس کے اصول (یعنی والدہ ،نانی اور فروع منکو حہ بیوی کی بیٹی پوتی  وغیرہ) حرام ہو جاتے ہیں اسی طرح زنا سے حرام ہوجاتے ہیں مگر احناف کا یہی مذہب  مذکورہ بالا آیت شریفہ اور حسب ذیل  احادیث کے مخالف ہے  لہٰذا  صحیح نہیں ، حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے : (عَنْ عَائِشَةَ رَضِیَ اللہُ عَنْہَا قَالَتْ: سُئِلَ رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ عَنِ الرَّجُلِ یُتْبِعُ الْمَرْأَةَ حَرَامًا أَیَنْکِحُ ابْنَتَہَا، أَوْ یُتْبِعُ الِابْنَةَ حَرَامًا أَیَنْکِحُ أُمَّہَا؟ قَالَتْ: قَالَ رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: " لَا یُحَرِّمُ الْحَرَامُ الْحَلَالَ، إِنَّمَا یُحَرِّمُ مَا کَانَ بِنِکَاحٍ حَلَالٍ " قَالَ إِسْحَاقُ: قَالَ عَبْدُ اللہِ بْنُ نَافِعٍ: وَبِہِ نَأْخُذُ) (۱: السنن  الکبریٰ  للبیہقی  ج۷ ص۱۶۹ و فتح الباری باب  مایحل من  النسا وما یحرم ج۹ ص۱۹۱) کہ حرام کو حرام نہیں کرتا کیونکہ شرعی نکاح ہی سے حرمت مصاہرت ثابت ہوتی ہے مگر اس حدیث کا ایک راوی متروک ہے ،لہٰذا یہ ضعیف ہے ۔ (حَدِیث بن عُمَرَ لَا یُحَرِّمُ الْحَرَامُ الْحَلَالَ سنن إبن ماجة  باب لا یحرم  الحلال ج1 ص 146-قال الحافظ  ابن الحجر  و إسنادہ  أصلح من الأول  أی من إسنادحدیث عائشة  المذکورة ) (۲: فتح الباری باب ما  بحل من النساء ومابحرم ج۹ ص ۱۹۴) حضرت عبداللہ بن عمر  رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا حرام حلال کو  حرام نہیں کرتا۔ (عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ رَضِیَ اللہُ عَنْہُمَا فِی رَجُلٍ غَشِیَ أُمَّ امْرَأَتِہِ قَالَ: " تَخَطَّی حُرْمَتَیْنِ، وَلَا تُحَرَّمُ عَلَیْہِ امْرَأَتُہُ)( السنن الکبری  باب الزنا لا یحرم الحلال ج7 ص 168) حضرت ابن عباس  ایک ایسے شخص کے متعلق سوال کیا گیا جس نے اپنی ساس کے ساتھ زناکیا تھا تو حضرت ابن عباس  نے فرمایا کہ اس نے حرمتیں پامال کیں،تاہم اس زنا سے اس کی بیوی اس پر حرام نہیں ہوئی۔ حافظ ابن حجر عسقلانی﷫ اس حدیث پر لکھتے ہیں اسناد صحیح ۔(فتح الباری ج9 ص 134) بخاری  کے محشی مولانا احمد علی حنفی صحیح بخاری کے بین السطورلکھتے ہیں اسناد صحیح بخاری ج2ص725۔کہ اس اثر کی سند صحیح ہے ۔ الشیخ السید محمد سابق المصری لکھتے ہیں : قولہ تعالی وأحل لکم ما ورآء ذالکم فہذا بیان عما یحل من النساء بعد بیان ما حرم منہن  ولم یذکر أن الزنا من أسباب التحریم .فقہ السنة ج2ص65 کہ آیت : "وأحل لکم ما ورآء ذالکم"میں اللہ نے حرام رشتوں کے ذکر کے بعد حلالرشتوں کو بیان فرمایا ہے اور زنا کو اسباب تحریم میں ذکر نہیں کیا۔ شیخ الإسلام حافظ ابن حجر فرماتے ہیں : أبی ذالک ذہب الجمہور وحجتہم  أن النکاح فی الشرع إنما یطلق علی المعقود علیہا  لا علی مجرد الوطءوأیضا  فالزنا  لا صداق فیہ ولا عدة ولا میراث.فتح الباری ج9ص195 کہ جمہو رعلمائے  امت اس طرف گے ہیں کہ زنا سے حرمت مصاہرت ثابت نہیں ہوتی ،ان کی ایک دلیل یہ ہے کہ شریعت میں نکاح عدم کا نام ہے  مطلق وطی کا نہیں ،علاوہ ازیں ان میں زنا کی وجہ سے نہ تو زانی ذمہ مہر کی ادائیگی واجب ہوتی ہے اور نہ مزنیہ عورت پر عدت  آتی ہے اور نہ اس میں قانون میراث لاگو ہوتا ہے ،لہذا حرمت مصاہرت زنا سے ثابت نہیں ہوتی ۔ مذکورہ بالا دلائل کی رو سے ساس سے زنا کے ارتکاب سے بیوی حرام نہیں ہوتی ،نکاح قائم رہتا ہے اور حنفیہ کا موقف ہر لحاظ سے کچا  اور کمزور ہے ، لہذا ان کا یہ قو ل قابل اعتبار اور در خور اعتناء نہیں ،پس جن مولویوں نے بیوی کی حرمت کا فتوی دیا  تھا  ان کا یہ فتوی اگرچہ حنفی رو  سے درست تھا مگر مذکورہ دلائل کی رو سے غلط تھا ۔ چونکہ اس غلط فتوی کی بنیاد پر آپ کے شوہر نے آپ کو طلاق دی ،اس لئے آپ کا نکاح طلاق کی وجہ سے ٹوٹا تھا زنا کی وجہ سے نہیں ۔ اب آپ کے بیان کے مطابق آپ کے دوسرے شوہر  نے آپ کو طلاق دے ڈالی ہے اور دوسرے شوہر کی طلاق پرسوال نامہ کی  تصرح کے مطابق صر ف ۴/۱،۱ ماہ کا عرصہ گزر ا ہے  ،لہٰذا ابھی عدت پوری نہیں ہوئی  مطلقہ غیر حاملہ کی عدت تین حیض ہے ۔ ﴿وَالْمُطَلَّقَاتُ یَتَرَبَّصْنَ بِأَنفُسِہِنَّ ثَلَاثَةَ قُرُوءٍ ۚ ... ٢٢٨﴾ ...البقرۃ اور حاملہ کی عدت وضع حمل ہے ﴿وَأُولَاتُ الْأَحْمَالِ أَجَلُہُنَّ أَن یَضَعْنَ حَمْلَہُنَّ ۚ ... ٤﴾...الطلاق لہٰذا جب تک آپ کوتین حیض نہ آجائیں اس وقت تک آپ اپنے پہلے شوہر کے  ساتھ نکاح شرعاً نہیں کر سکتیں اور حمل کی صورت میں وضع حمل سے پہلے نکاح نہیں کر سکتیں ۔عدت (بصورت حیض  یا وضع حمل ) پوری ہوجانے پر آپ اپنے پہلے شوہر کے  ساتھ نکاح شرعاً کر سکتی ہیں  اگر چہ حنفی مولوی کے  مطابق آپ ایسا نہیں کر سکتیں کہ سابقہ بنیاد  قائم ہے مگر نہ ان کا فتویٰ صحیح ہے اور نہ اس کے فتویٰ  کی بنیاد صحیح ، لہٰذا ان کا فتویٰ قابل عمل نہیں ۔ مفتی کسی قانونی سقم کا ہرگز ذمہ دار نہ ہوگا ۔ ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب فتاویٰ محمدیہ ج1ص728