کتاب: حجیت قراءات - صفحہ 100
٭ ﴿فَأَذَاقَھَا اللّٰه لِبَاسَ الْجُوْعِ وَالخَوْفِ﴾ (النحل:۱۱۲) میں لِبَاسَ پرعطف ڈالتے ہوئے وَالْخَوْفَ کو منصوب پڑھنا۔ ٭ ﴿مَا کَانَ حُجَّتَھُمْ إِلاَّ أَنْ قَالُوْا﴾(الجاثیہ:۲۵) میں حُجَّتَھُمْ کو کَانَ کا اسم بناتے ہوئے مرفوع پڑھیں اور اَن کو مصدریہ ٹھہراتے ہوئے جملہ کو تاویل ِمصدر میں کرکے کَانَ کی خبر بنائیں۔ ٭ ﴿وَالأَرْضَ بَعْدَ ذٰلِکَ دَحٰھَا﴾ (النازعات:۳۰) کو مبتداء بناتے ہوئے وَالأَرْضُ پڑھاگیا ہے اور بعد کاجملہ خبر بن کر محل رفع میں ہوگا۔ ٭ ﴿بَلٰغٌ﴾ (الاحقاف:۳۵) کو بَلاَغاً نصب کے ساتھ پڑھنا۔ اس صورت میں یہ فعل محذوف کا مفعول مطلق ہوگا۔ تقدیری عبارت ہوگی: بلغنا القرآن بلاغاً۔ ٭ ﴿فَاللّٰه خَیْرٌ حَافِظًا﴾(یوسف:۶۴) میں خَیْرٌ کو حَافِظًا کی طرف مضاف کرتے ہوئے خَیْرُ کی تنوین کو گرا دیا اور حَافِظٍ کو اس کامضاف الیہ بنا دیا۔ ٭ ﴿تَنْزِیْلَ الْعَزِیْزِ الرَّحِیْْمِ﴾ (یس:۵) میں وَالْقُرْآنِ الْحَکِیْمِ سے بدل بناتے ہوئے لام کو مجرور پڑھنا۔ ۴۔ نقص و زیادتی کااختلاف اس کی مثالیں مندرجہ ذیل ہیں: ٭ یوں پڑھا جائے: ﴿وَالنَّھَارِ إِذَا تَجَلّٰی وَالذَّکَرِ وَالأُ نْثٰی﴾ (اللیل:۳) ٭ یوں پڑھا جائے: ﴿فَإِنْ ٰامَنُوْا بِمَا ٰامَنْتُمْ بِہٖ فَقَدِ اھْتَدَوْا﴾ (البقرہ:۱۳۷) ٭ یوں پڑھا جائے: ﴿إِنْ تُعَذِّبْھُمْ فَعِبَادُکَ﴾ (المائدہ:۱۱۸) ٭ یوں پڑھا جائے: ﴿وَلاَ یَحْسَبُ الَّذِیْنَ کَفَرُوْا سَبَقُوْا﴾ (الانفال:۵۹) ٭ یوں پڑھا جائے: ﴿فَأَسْرِ بِأَھْلِکَ بِقِطْعٍ مِّنَ اللَّیْلِ إِلَّامْرَأَتَکَ﴾ (ہود:۸۱) یہاں ﴿وَلاَ یَلْتَفِتْ مِنْکُمْ أَحَدٌ ﴾محذوف ہے۔ ٭ یوں پڑھا جائے: ﴿الَّذِیْنَ تَوَفّٰھُمُ الْمَلـٰکَۃُ﴾(النحل:۲۸) اصل میں تَتَوَفّٰہُمْ