کتاب: فتنۂ غامدیت، ایک تحقیقی وتنقیدی جائزہ - صفحہ 43
’’جس نے رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت کی، بلاشبہہ اس نے اﷲ کی اطاعت کی۔‘‘ { قُلْ إِنْ كُنْتُمْ تُحِبُّونَ اللَّهَ فَاتَّبِعُونِي } [آل عمران: ۳۱] ’’اگر تم اﷲ سے محبت کرنا چاہتے ہو تو میرا اتباع کرو۔‘‘ ان آیات سے واضح ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کی حیثیت ایک مطاع اور متبوع کی ہے، جس کی اطاعت و اتباع اہلِ ایمان کے لیے ضروری ہے۔ علاوہ ازیں آپ کو فصلِ خصومات اور رفعِ تنازعات کے لیے حاکم اور حَکَم بنایا گیا ہے، جیسا کہ آیت مذکورہ { فَإِنْ تَنَازَعْتُمْ فِي شَيْءٍ فَرُدُّوهُ إِلَى اللَّهِ وَالرَّسُولِ } کے علاوہ ذیل کی آیات سے بھی واضح ہے: { فَلَا وَرَبِّكَ لَا يُؤْمِنُونَ حَتَّى يُحَكِّمُوكَ فِيمَا شَجَرَ بَيْنَهُمْ ثُمَّ لَا يَجِدُوا فِي أَنْفُسِهِمْ حَرَجًا مِمَّا قَضَيْتَ وَيُسَلِّمُوا تَسْلِيمًا } [النساء: ۶۵] ’’آپ کے رب کی قسم! لوگ اس وقت تک مومن نہیں ہوں گے، جب تک وہ (اے پیغمبر!) آپ کو اپنے جھگڑوں میں اپنا حَکَم (ثالث) نہیں مانیں گے، پھر آپ کے فیصلے پر اپنے دلوں میں کوئی تنگی بھی محسوس نہ کریں اور دل سے اس کو تسلیم کر لیں۔‘‘ نیز ارشادِ الٰہی ہے: { وَمَا كَانَ لِمُؤْمِنٍ وَلَا مُؤْمِنَةٍ إِذَا قَضَى اللَّهُ وَرَسُولُهُ أَمْرًا أَنْ يَكُونَ لَهُمُ الْخِيَرَةُ مِنْ أَمْرِهِمْ وَمَنْ يَعْصِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ فَقَدْ ضَلَّ ضَلَالًا مُبِينًا (36) } [الأحزاب: ۳۶] ’’جب اﷲ اور اس کا رسول کسی معاملے کا فیصلہ کر دیں تو پھر کسی