کتاب: فقہی احکام و مسائل - صفحہ 90
نماز ظہر، اول وقت ادا کرنا مستحب ہے،البتہ سخت گرمی میں مستحب یہ ہے کہ اس میں اس قدر تاخیر کی جائے کہ گرمی کی شدت کازورٹوٹ جائے۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے: "إِذَا اشْتَدَّ الْحَرُّ فَأَبْرِدُوا بِالصَّلَاةِ فَإِنَّ شِدَّةَ الْحَرِّ مِنْ فَيْحِ جَهَنَّمَ" "جب گرمی شدید ہوتو نماز کوٹھنڈا کرو،بے شک گرمی کی شدت جہنم کی بھاپ میں سے ہے۔"[1] (2)۔نماز عصر: جب ظہر کے وقت کی انتہا ہوتی ہے تب نماز عصر کے وقت کی ابتدا ہوتی ہے،یعنی جب ہر شے کا سایہ لمبائی میں ایک مثل ہوجائے۔[2]اور عصر کا آخری وقت اہل علم کے صحیح قول کے مطابق آفتاب کےزرد پڑجانے تک ہے۔[3]نماز عصر اول وقت اداکرنا مسنون ہے۔اسی نماز کو اللہ تعالیٰ کے فرمان: "حَافِظُوا عَلَى الصَّلَوَاتِ وَالصَّلَاةِ الْوُسْطَى" "نمازوں کی حفاظت کرو بالخصوص درمیان والی نماز کی۔"[4] میں وسطی نماز کہہ کر اس کی فضیلت بیان کی گئی ہے۔اور احادیث صحیحہ سے بھی اس کی تائید ہوتی ہے۔ (3)۔نماز مغرب:مغرب کی نماز کاوقت تب شروع ہوتاہے جب سورج مکمل طور پر غروب ہوجائے اس کا کوئی حصہ کہیں سے نظر نہ آئے۔غروب آفتاب کی علامت یہ ہے کہ مشرق کی جانب رات کی تاریکی کے آثار نمودار ہو جائیں،چنانچہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "إِذَا أقْبَلَ اللَّيْلُ منْ هَا هُنَا، وأدْبَرَ النَّهَارُ مِنْ هَا هُنَا، وَغَرَبتِ الشَّمْسُ، فَقَدْ أفْطر الصَّائم " "جب اس جانب(مشرق) سے رات آجائے اور اس(مغرب کی) جانب دن رخصت ہوجائے اور سورج غروب ہوجائے توروزہ دار روزہ افطار کرے۔"[5] [1] ۔صحیح البخاری ،مواقیت الصلاۃ، باب الابراد بالظھر فی شدۃ الحر، حدیث 533۔536۔ وصحیح مسلم، المساجد، باب استحباب الابراد بالظھر فی شدۃ الحر..... حدیث 615۔ [2] ۔صحیح مسلم، المساجد، باب اوقات الصلوات الخمس، حدیث 612 وسنن ابی داود، الصلاۃ ،باب فی المواقیت ،حدیث 393۔ [3] ۔ حدیث میں ہے:"وَمَنْ أَدْرَكَ رَكْعَةً مِنْ الْعَصْرِ قَبْلَ أَنْ تَغْرُبَ الشَّمْسُ فَقَدْ أَدْرَكَ الْعَصْرَ "(صحیح البخاری، مواقیت الصلاۃ، باب من ادرک الفجر رکعۃ ،حدیث 579)"جس نے غروب آفتاب سے قبل عصر کی ایک رکعت پڑھ لی،اس نے عصر کی نمازپالی۔"اس سے معلوم ہوا کہ عصر کاآخری وقت غروب آفتاب تک ہے۔(صارم) [4] ۔البقرۃ:2/238۔ [5] ۔صحیح البخاری، الصوم، باب متی یحل فطر الصائم؟حدیث 1954۔وصحیح مسلم ،الصیام، باب بیان وقت انقضاء الصوم وخروج النھار،حدیث 1100۔