کتاب: فقہ الصلاۃ - صفحہ 36
’’اے مریم! اپنے رب کے حضور عاجزی سے کھڑی ہو اور سجدہ کر اور رکوع کرنے والوں کے ساتھ رکوع کر۔‘‘ 6 حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو وصیتِ الٰہی: ﴿وَ اَوْصٰنِیْ بِالصَّلٰوۃِ وَ الزَّکٰوۃِ مَا دُمْتُ حَیًّا﴾[مریم:31] ’’اور(میرے رب نے)مجھے نماز و زکات کی وصیت فرمائی ہے کہ تاحینِ حیات ان کی پابندی کروں۔‘‘ 7 حضرت زکریا علیہ السلام کی نماز: ﴿فَنَادَتْہُ الْمَلٰٓئِکَۃُ وَ ھُوَ قَآئِمٌ یُّصَلِّیْ فِی الْمِحْرَابِ﴾[آل عمران:39] ’’فرشتوں نے انھیں(زکریا)کو اُس وقت پکارا جبکہ وہ محراب میں کھڑے نماز پڑھ رہے تھے۔‘‘ 8 حضرت لقمان علیہ السلام کی وصیت: ﴿یٰبُنَیَّ اَقِمِ الصَّلٰوۃَ وَاْمُرْ بِالْمَعْروْفِ وَانْہَ عَنِ الْمُنْکَرِ وَاصْبِرْ عَلٰی مَآ اَصَابَکَ اِنَّ ذٰلِکَ مِنْ عَزْمِ الْاُمُوْرِ﴾[لقمان:17] ’’اے میرے بیٹے! نماز قائم کر اور نیکی کا حکم دے اور بُرائی سے روک اور(اس راہ میں)جو مشکلات آئیں،ان پر صبر کر،بے شک یہ بڑی عزیمت و ہمت کے کاموں میں سے ہے۔‘‘ 9 شریعتِ اسلامیہ اور نبی علیہ السلام کو حکمِ الٰہی: ﴿وَاْمُرْ اَھْلَکَ بِالصَّلٰوۃِ وَ اصْطَبِرْ عَلَیْھَا﴾[طٰہٰ:132] ’’اور آپ اپنے اہلِ خانہ(اور امت)کو نماز کا حکم دیجیے اور خود بھی اس پر قائم رہیے۔‘‘ 3۔ترکِ نماز کا انجام،قرآن کریم میں 1۔﴿فَاِنْ تَابُوْا وَ اَقَامُوا الصَّلٰوۃَ وَاٰتَوُا الزَّکٰوۃَ فَاِخْوَانُکُمْ فِی الدِّیْنِ [التوبۃ:11] ’’پھر اگر یہ لوگ توبہ کر لیں اور نماز قائم کریں اور زکات ادا کریں تو یہ تمھارے دینی بھائی