کتاب: فتاوی ابن باز - صفحہ 185
فتویٰ (۴۲۹۷) اسلام میں فرقوں کی کوئی گنجائش نہیں سوال کیااسلام میں مختلف طریق اور سلسلے موجود ہیں، مثلاً شاذلیہ،خلوتیہ وغیرہ اگر یہ طریقے صحیح ہیں تو اس کی دلیل کیا ہے؟ اور اللہ تعالیٰ کے اس فرمان کا کیا مطلبہے؟ ﴿وَ اَنَّ ہٰذَا صِرَاطِیْ مُسْتَقِیْمًا فَاتَّبِعُوْہُ وَ لَا تَتَّبِعُوا السُّبُلَ فَتَفَرَّقَ بِکُمْ عَنْ سَبِیْلِہٖ ذٰلِکُمْ وَصّٰکُمْ بِہٖ لَعَلَّکُمْ تَتَّقُوْنَ﴾ (الانعام۶؍۱۵۳) ’’اور یہ میرا راستہ ہے بالک سیدھا لہٰذٓ اس کی پیروی کرو اور (دوسرے) راستوں پر نہ چلنا ورنہ وہ تمہیں اس (اللہ) کے راستے سے جدا کردیں گے۔ اس نے تمہیں یہ نصیحت کی ہے تاکہ تم بچو۔‘‘ اور اس آیت کاکیا مطلب ہے: ﴿وَ عَلَی اللّٰہِ قَصْدُ السَّبِیْلِ وَ مِنْہَا جَآئِرٌ وَ لَوْ شَآئَ لَہَدٰیکُمْ اَجْمَعِیْن﴾ (النحل۱۶؍۹) ’’اور اللہ تک سیدھی راہ پہنچتی ہے اور بعض را ہیں ٹیڑھی ہیں، اگر وہ چاہتا ہے تو تم سب کو ہدایت دے دیتا۔‘‘ اللہ کا راستہ کون سا ہے؟ اور اس سے ہٹانے والی راہیں کون سی ہیں؟ اس حدیث کا کیا مطلب ہے جو عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک خط کھینچا اور فرمایا: ’’ھذا سبیل الرشید‘‘ یہ ہدایت کا راستہ ہے۔ پھر دائیں بائی کئی لکیریں کھینچیں اور فرمایا: (ھٰذَا سُبُلٌ عَلیٰ کُلِّ سَبِیلٍ مِنْھَا شَیْطَانٌ یَدْعُوا أِلَیْہِ) ’’یہ راہیں ہیں، ان میں سے ہرراہ پر ایک شیطان ہے جو اپنی طرف بلاتا ہے؟ جواب اَلْحَمْدُ للّٰہ وَالصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی رَسُوْلِہِ وآلِہِ وَأَصْحَابِہ وَبَعْدُ: مذکورہ بالا طریق یا اس طرح کے دوسرے سلسلے اسلام میں نہیں پائے جاتے۔ اسلام میں وہی کچھ موجود ہے جو سوال میں مذکور آیتوں اور حدیثوں سے ثابت ہوتا ہے اس کی تائید دیگر احادیث سے بھی ہوتی ہے۔ ارشاد نبوی ہے: (افْتَرَقَتِ الْیَھُودُ عَلی أِحْدَی وَسَبْعِینَ فِرْقَۃً وَاقْتَرَقَتِ النَّصَارَی عَلَی اثْنَتَینِ وَسَبْعِینَ فَرْقَۃًوَسَتَفْتَرِقُ ھٰذِہِ الاُمَّۃُ عَلَی ثَلاَثٍ وَسَبْعِینَ فِرْقَۃً کُلُّھَا فِیی النَّارِ أِلاَّ وَاحِدَۃٍ قِیلَ مَنْ ھِیَ یَا رَسُولَ اللّٰہِ؟ قَالَ: مَنْ کَانَ عَلَی مِثْلِ مَا أَنَا عَلَیْہِ الْیَوْمَ وَأَصْحَابِي) ’’یہودی اکہتر فرقوں میں تقسیم ہوگئے، عیسائی بہتر فرقوں میں تقسیم ہوگئے۔ اور میری امت تہتر فرقوں میں تقسیم ہوجائے گی‘ ایک کے سوا وہ بھی سب فرقے جہنم میں جائیں گے عرض کی ’’یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ‘‘وہ کون لوگ ہیں؟ ارشاد فرمایا: ’’جو اس طریقے پر ہو جس پر میں اور آپ کے صحابہ ہیں۔‘‘ اور ارشاد ہے: (لاَ تَزالُ طَائِفَۃٌ مِنْ أُمَّتِي عَلَی الْحَقِّ مَنْصُوْرَۃً لاَ یَضُرُّھُمْ مَنْ خَذَلَھُمْ وَلاَ مَنْ خَالَفَھُمْ حَتَّی یَأْتِي أَمْرُ اللّٰہِ وَھُمْ عَلیٰ ذَالِکَ) ’’میری امت میں سے ایک جماعت کی (اللہ کی طرف سے) مدد ہوتی رہے گی‘ ان کی مدد نہ کرنے والا یا ان کی مخالفت کرنے والا ان کو نقصان نہ پہنچاسکے گا۔ حتیٰ کہ اللہ کاحکم آجائے گا اور وہ اسی حال میں ہوں گے۔‘‘ حق کا راستہ یہی ہے قرآن مجید اور صحیح صریح احادیث نبویہ کی اتباع کی جائے۔ یہی سیدھا راستہ ہے۔ حضرت عبداللہ