کتاب: فتاویٰ اصحاب الحدیث(جلد 3) - صفحہ 306
قرآن و حدیث کی روشنی میں فتویٰ دیں۔ جواب:دیت لے کر قاتل کا خون معاف کر دینا اچھی بات ہے۔ قرآن کریم نے اس کی صراحت کی ہے۔ اب دیت کی رقم ورثاء میں بطور ترکہ تقسیم ہو گی، صرف اولاد کے لیے مخصوص نہیں کی جائے گی، جیسا کہ حدیث میں ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’بے شک دیت کی رقم مقتول کے ورثاء کے درمیان تقسیم کر دی جائے گی کیونکہ وہ قرابت دار ہیں، قرابت داروں سے جو بچ جائے وہ عصبہ رشتہ داروں کے لیے ہو گا۔‘‘[1] اس طرح حدیث میں ہے کہ اشیم ضبابی رضی اللہ عنہ قتل ہو گئے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی دیت سے اس کی بیوی کو وارث بنایا تھا۔ [2] ان مذکورہ احادیث سے معلوم ہو اکہ مقتول کی دیت بطور وراثت ہو گی، البتہ اگر قاتل قرابت داروں سے ہے تو اسے وراثت سے کچھ حصہ نہیں دیا جائے گا، کیونکہ اس نے اقدام قتل سے خود کو محروم کر لیا ہے، صورت مسؤلہ میں بیوہ کو آٹھواں، ماں کو چھٹا حصہ اور باقی اولاد میں اس طرح تقسیم کیا جائے کہ بیٹے کو بیٹی سے دو گنا ملے ۔ سہولت کے پیش نظر دیت کی رقم کو چوبیس میں تقسیم کر دیا جائے، ایک حصہ دس ہزار چار صد سولہ روپے چھیاسٹھ پیسے ہے، تین حصے بیوہ کے لیے یعنی 31250/- روپے حصے والدہ کے لیے یعنی 41666/- روپے اور باقی سترہ حصے یعنی 177084/- روپے اولاد کے لیے ہیں۔ اس رقم کو اولاد میں اس طرح تقسیم کیا جائے کہ بیٹے کو بیٹی سے دو گنا حصے ملے یعنی 29514/- روپے فی لڑکی اور 59028/- روپے فی لڑکا تقسیم کر دئیے جائیں۔ مقتول کی دیت کے علاوہ باقی جائیداد بھی مذکورہ حصص کے مطابق تقسیم کی جائے گی۔ (واللہ اعلم) بیوہ، بہن اور بیٹوں کا حصہ سوال:ایک آدمی فوت ہوا اس کا زرعی رقبہ بائیس کنال تھا، پسماندگان میں سے بیوہ، بہن اور چار بیٹیاں ہیں، ہر ایک کو مرحوم کی زمین سے کتنا حصہ ملے گا؟ جواب:اولاد کی موجودگی میں بیوہ کو آٹھواں حصہ ملتا ہے، ارشاد باری تعالیٰ ہے: ﴿فَاِنْ كَانَ لَكُمْ وَلَدٌ فَلَهُنَّ الثُّمُنُ﴾[3] ’’ اور اگر میت کی اولاد ہو تو بیویوں کا آٹھواں حصہ ہے۔‘‘ میت کے ترکہ سے بیٹیوں کے لیے دو تہائی 2/3 ہے، ارشاد باری تعالیٰ ہے: ﴿فَاِنْ كُنَّ نِسَآءً فَوْقَ اثْنَتَيْنِ فَلَهُنَّ ثُلُثَا مَا تَرَكَ١ۚ ﴾[4] ’’اور اگر اولاد میں صرف لڑکیاں ہی ہوں اور وہ دو سے زائد ہوں تو ان کا ترکہ سے دو تہائی ہے۔‘‘ [1] ابوداود، الدیات: ۴۵۶۴۔ [2] ابن ماجہ، الدیات: ۲۶۴۲۔ [3] ۴/النساء:۱۲۔ [4] ۴/النساء۱۱۔