کتاب: دعوت دین کے بنیادی اصول - صفحہ 602
’’اور آپ کا رب ایسا نہیں ہے کہ کسی بستی کو ظلم سے ہلاک کر دے جبکہ وہاں کے لوگ اصلاح کرنے والے ہوں۔‘‘ 8۔تبلیغ و نفیر کے لیے نکلنا دُنیا و مافیہا سے بہتر ہے سیدنا انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ((غُدْوَۃٌ فِی سَبِیلِ اللّٰہِ أَوْ رَوْحَۃٌ خَیرٌ مِنَ الدُّنْیَا وَمَا فِیھَا)) [1] ’’اللہ کی راہ میں صبح کے وقت یا شام کے وقت نکلنا، دنیا اور اس میں موجود ہر ایک چیز سے بہتر ہے۔‘‘ 9۔ تبلیغ و نفیر کی راہ میں گرد و غبار جنت کی کستوری کا باعث ہے سیدنا انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ((مَنْ رَاحَ رَوحَۃً فِی سَبِیلِ اللّٰہِ کَانَ لَہٗ بِمِثْلِ مَا أَصَابَہٗ مِنَ الْغُبَارِ مِسْکًا یَومَ الْقِیَامَۃِ)) [2] ’’جو شخص اللہ کی راہ میں شام کے وقت سفر کے لیے نکلا تو جتنا گرد و غبار اسے لگے گا، اتنی ہی اسے قیامت کے دِن کستوری ملے گی۔‘‘ 10۔ تبلیغ و نفیر کی راہ میں نکلنے والے پر جہنم حرام ہے سیدنا ابوعبس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ((مَنِ اغْبَرَّتْ قَدَمَاہُ فِی سَبِیلِ اللّٰہِ حَرَّمَہُ اللّٰہُ عَلَی النَّارِ)) [3] ’’جس شخص کے دونوں قدم اللہ کی راہ میں غبار آلود ہو جائیں اللہ اس کو جہنم پر حرام فرما دے گا۔‘‘ [1] صحیح البخاری: ۶۵۶۸. [2] صحیح الجامع: ۶۲۶۔ سلسلۃ الأحادیث الصحیحۃ: ۲۳۳۸. [3] صحیح البخاری: ۶۰۷.