کتاب: اپنے آپ پر دم کیسے کریں - صفحہ 15
نیز آپ سے یہ بھی روایت ہے: ’’جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو کوئی تکلیف ہوتی تو معوذات پڑھ کر اپنے آپ پردم کیا کرتے ۔‘‘[1] مریض کویہ بھی اختیار حاصل ہے کہ وہ ان کے علاوہ کوئی دوسری سورتیں پڑھ کر دم کرے۔قرآن سارے کا سارا دم کرنے کی چیز ہے۔[2] اور تمام قرآن میں شفاء ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں : ﴿ قُلْ ہُوَ لِلَّذِیْنَ اٰمَنُوْا ہُدًی وَّشِفَآئٌ﴾ [فصلت:۴۴] ’’ آپ کہہ دیجئے:یہ تو ایمان والوں کے لیے ہدایت و شفا ہے ۔‘‘ اوراللہ سبحانہ و تعالیٰ فرماتے ہیں : ﴿وَ نُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْاٰنِ مَا ھُوَ شِفَآئٌ وَّ رَحْمَۃٌ لِّلْمُؤْمِنِیْنَ ﴾[اسراء:۸۲] ’’اور ہم اتارتے ہیں قرآن میں سے جس سے روگ دفع ہوں اور رحمت ایمان والوں کے واسطے ۔‘‘ سوم:.....پانی پر دم کرکے پئیں اور اس سے نہائیں : آیات اور احادیث میں ثابت دعائیں پانی پر پڑھ کر دم کیا جائے ؛ پھر اس [1] البخاری(۵۰۱۶) مسلم(۱۲۹۲)۔ [2] یہ بات علامہ عبدالعزیز بن باز رحمہ اللہ نے ارشاد فرمائی ہے۔ جو کہ جادو اور بد نظری کے متعلق کی گئی ان کی تقریر میں کیسٹ ریکارڈ میں موجود ہے۔