کتاب: اپنے آپ پر دم کیسے کریں - صفحہ 149
داخل ہوتے وقت اور کھانا شروع کرنے کے وقت بسم اللہ پڑھ لیتا ہے تو شیطان کہتا ہے کہ:’’ آج اس گھر میں رات گزارنے کی جگہ نہ ملے گی اور نہ ہی شام کا کھانا ملے گا۔‘‘ [1] اور اگر کھانے کا وقت اللہ کا نام نہ لے توشیطان(دوسرے شیاطین سے) کہتا ہے کہ تمہیں رات گزارنے کی جگہ اور شام کا کھانا مل گیا۔‘‘[2] گھر میں کثرت سے قرآن کی تلاوت : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: (( اِقْرَؤُوْا سُوْرَۃَ الْبَقَرَۃِ فِی بُیُوْتِکُمْ؛ فَاِنَّ الشَّیْطَانَ لَایَدْخُلُ بَیْتًا یُقْرََئُ فِیْہِ سُوْرَۃُ الْبَقَرَۃِ )) ’’گھروں میں سورت بقرہ پڑھاکرو،بیشک جس گھر میں سورت بقرہ پڑھی جاتی ہو وہاں شیطان داخل نہیں ہوتا۔‘‘[3] رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’بیشک شیطان اس گھر میں داخل نہیں ہوتا جس میں سورت بقرہ پڑھی جاتی ہو۔‘‘[4] [1] مسلم(۲۰۱۸)۔ [2] مسلم :۲۰۱۸۔ [3] مسلم(۷۸۰)۔ مستدرک حاکم ۲؍۲۶۰] [4] صحیح الترغیب والترہیب(۱۴۶۳)۔ سیدنا ابو ھریرہ رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ آپ نے فرمایا:(( لَاتَجْعَلُوْا بُیُوْتَکُمْ مَقَابِرَ اِنَّ الشَّیْطَانَ یَنْفِرُ مِنَ الْبَیْتِ الَّذِیْ یُقْرَئُ فِیْہِ سُوْرَۃُ الْبَقَرَۃِ ))۔’’اپنے گھروں کو قبرستان نہ بناؤ بے شک جس گھر میں سورہ بقرہ پڑھی جاتی ہے وہاں سے شیطان بھاگ جاتا ہے۔‘‘