کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 864
عن نافع عن ابن عمر.....الخ۔ ووصلہ عبد بن حمید فی المنتخب من المسند و رواہ ابن بطۃ فی الإبانۃ من طریق آخر عن أبی شھاب.....الخ۔ وحمزۃ ھذا ھوا بن أبی حمزۃ قال الدارقطنی : متروک وقال ابن عدی: عامۃ مرویاتہ موضوعۃ۔ وقال ابن حبان: ینفرد عن الثقات بالموضوعات حتی کأنہ المتعمد لھا ولا تحل الروایۃ عنہ۔ ۳۔عن نبیط بن شریط مرفوعاً اھل بیتی کالنجوم بأیھم اقتدیتم اھتدیتم۔ ھو فی نسخۃ أحمد بن نبیط الکذاب من روایۃ أبی نعیم الأصبھانی قال: حدثنا أبو الحسن أحمد بن القاسم بن الریان المصری المعروف بالمکی قال: نا أحمد ابن إسحاق بن إبراھیم بن نبیط بن شریط أبو جعفر الأشجعی عن أبیہ إسحاق عن أبیہ إبراھیم عن أبیہ نبیط بن شریط .....الخ۔ قال الذھبی فی ھذہ النسخۃ : فیھا بلایا ، وأحمد ابن إسحاق لا یحل الاحتجاج بہ فإنہ کذاب۔ وأقرہ الحافظ فی اللسان۔ والراوی عنہ أحمد بن القاسم المکی ضعیف۔ ﴿رد ھذا الروایات﴾ وھذا کلہ باطل مکذوب من تولید أھل الفسق لوجوہ: ۱۔لم یثبت شیء منھا بطریق النقل کما رأیت۔ ۲۔لم یجز أن یأمرا لنبی صلی ا للّٰه علیہ وسلم بما نھی عنہ من التنازع والاختلاف۔ ۳۔إن التشبیہ لیس بصواب ، والنبی صلی ا للّٰه علیہ وسلم لا یقول إلا الحق والصواب لأنہ لا ینطق عن الھوی إن ھو إلا وحی یوحی۔ قال بعض الناس: معناہ فیما نقلوا عنہ و شھدوا بہ علیہ ، فکلھم ثقۃ مؤتمن علی ما جاء بہ۔و ھذا المعنی لیس بصحیح ، بل ھو خطأ کما تدل علیہ ألفاظ الروایات المذکورۃ قبل۔ وقال بعض الناس: وھذا الحدیث و إن کان فیہ مقال عند المحدثین فھو صحیح عند أھل الکشف۔وھذا باطل لا یلتفت إلیہ فإن الکشف لغیر النبی صلی ا للّٰه علیہ وسلم لیس بحجۃ ، فثبت العرش ثم انقش۔ ٭٭٭