کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 863
وجعفر ھذا قال الدار قطنی: یضع الحدیث۔ وقال أبو زرعۃ: روی أحادیث لا أصل لھا۔ وقال الذھبی: إنہ من بلایاہ۔ ۳۔ عن ابن عباس مرفوعاً : مھما أوتیتم من کتاب اللّٰه فالعمل بہ لا عذر لأحدکم فی ترکہ ، فإن لم یکن فی کتاب اللّٰه فسنۃ منی ماضیۃ ، فإن لم یکن سنۃ منی ماضیۃ فما قال أصحابی إن أصحابی بمنزلۃ النجوم فی السماء ، فأیھا أخذتم بہ اھتدیتم واختلاف أصحابی لکم رحمۃ۔ رواہ الخطیب فی الکفایۃ ، وأبو العباس الأصم فی الثانی من حدیثہ ، والبیہقی فی المدخل ، والدیلمی ، وابن عساکر من طریق سلیمان بن أبی کریمۃ عن جویبر عن الضحاک عن ابن عباس.....الخ سلیمان ھذا قال ابن أبی حاتم: ضعیف الحدیث۔ وجویبر ھوا بن سعید الأزدی قال الدار قطنی والنسائی وغیرھا: متروک ، وضعفہ ابن المدینی جدا ، والضحاک بن مزاحم الھلالی لم یلق ابن عباس۔ وقال البیھقی بعد ذکر الحدیث: ھذا حدیث متنہ مشہور ، وأسانیدہ ضعیفۃ لم یثبت فی ھذا إسناد۔ قال صاحب جزیل المواھب فی اختلاف المذاھب: فی ھذا الحدیث فوائد منھا إخبارہ صلی ا للّٰه علیہ وسلم باختلاف المذاھب بعدہ فی الفروع ، وذلک من معجزاتہ لأنہ من الأخبار بالمغیبات، ورضاہ بذلک و تقریرہ علیہ حیث جعلہ رحمۃ ، والتخییر للمکلف فی الأخذ بأیھا شاء۔ والرد علیہ ثبت العرش ثم انقش۔ ۴۔ عن عمر بن الخطاب مرفوعا: سألت ربی فیما اختلف فیہ أصحابی من بعدی ، فأوحی اللّٰه إلی: یا محمد إن اصحابک عندی بمنزلۃ النجوم فی السماء بعضھا أضوأ من بعض ، فمن أخذ بشیء مما ھم علیہ من اختلافھم فھو عندی علی ھدی۔ رواہ ابن بطۃ فی الإبانۃ ، والخطیب أیضا ، ونظام الملک فی الأمالی ، والدیلمی ، والضیاء فی المنتقی ، وابن عساکر من طریق نعیم بن حماد ثنا عبدالرحیم بن زید العمی عن أبیہ عن سعید بن المسیب عن عمر بن الخطاب.....الخ عبدالرحیم بن زید العمی قال ابن معین: کذاب۔ وفی المیزان:ھذا الحدیث باطل۔ ۵۔ عن ابن عمر مرفوعاً: إنما أصحابی مثل النجوم فأیھم أخذتم بقولہ اھتدیتم۔ ذکرہ ابن عبدالبر تعلیقا، وعنہ ابن حزم من طریق أبی شھاب الحناط عن حمزۃ الجزری