کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 796
أن یعصیہ فلا یعصہ)) کا معنی و مفہوم کیا ہے؟ حافظ ابن حجر فرماتے ہیں : ((والخبر صریح فی الأمر بوفاء النذر إذا کان فی طاعۃ ، وفی النھی عن ترک الوفاء بہ إذا کان فی معصیۃ))۱ھ (۱۱/۵۸۲) قولہ: وفی النھی عن ترک الوفاء.....الخ کذا فی النسخۃ التی بیدی، والصواب: وفی النھی عن الوفاء بہ إذا کان فی معصیۃ۔ فترک الترک ھنا ھو الصحیح۔ قال النواب رحمہ اللّٰه تعالیٰ فی الروضۃ الندیۃ: قد ورد النھی عن النذر کما فی الصحیحین و غیرھما من حدیث ابن عمر قال: نھی رسول اللّٰه صلی ا للّٰه علیہ وسلم عن النذر ، وقال: إنہ لا یرد شیئا وإنما یستخرج بہ من مال البخیل ، وفیہما أیضا من حدیث أبی ھریرۃ نحوہ ، ثم ورد الا ذن بالنذر فی الطاعۃ ، والنھی عنہ فی المعصیۃ کما فی الصحیحین وغیرھما من حدیث عائشۃ عن النبی صلی ا للّٰه علیہ وسلم قال: من نذر أن یطیع اللّٰه فلیطعہ.....الخ (۲/۱۷۵) أقول: إِن الأحادیث التی ذکرھا النواب لاِثبات الاذن بالنذر فی الطاعۃ لا تدل علی الاذن ولا تثبتہ ، ثم لم یأت بدلیل ما علی تأخر أحادیث عائشۃ و عمرو بن شعیب عن أبیہ عن جدہ ، وغیرھما عن أحادیث ابن عمرو أبی ھریرۃ وغیرھما فی النھی عن النذر ، واللّٰه أعلم۔)) ۱۹/۱۲/۱۴۲۲ھ ٭٭٭