کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 685
الجہادیون أھل الأہواء والفوضٰی قد سمّوا ھواھم جہادا وأن عامّۃ اھل الاسلام فی کافۃ بلاد المسلمین غیر مکلفین بالجہاد والقتال وإنما أمر الجہاد إلی أولی الأمر جاہدوا أم لم یجاھدوا ، قصروا فی اداء حقہ أم أدوّا حقہ ، لا یسأل مسلم عن ترک الجہاد وغفلتہ عنہ لأنہ مسؤل عن رعیّتہ فقط وإنما علی المسلم أن یتعلم ویعلّم ویؤدب أھلہ فحسب وقال تسئلون العلماء عن نواقض الوضوء ومسائل الطہارۃ وما شاکلھا من صغار الأمور وأما اذا کان أمر ضرب الأعناق وتضحیۃ النفوس القیّمۃ فتعملون علی شاکلتکم من غیرمبالاۃ بقول العلماء۔ ھذا مایشیر إلیہ غالب کلام الأخ وأما اذا استدللنا لہ بحدیث: ’’ لا تزال طائفۃ وفی لفظ عصابۃ من أمتی یُقاتِلُونَ علی الحق لا یضرہم من ناواھم .....الخ فرد علینا بأن المراد من الحدیث طائفۃ المحدثین متغافلا عن کلمۃ یُقَاتِلُوْنَ ‘‘ واذا قیل لہ أن جہاد ابی بصیر وابی جندل رضی اللّٰه عنہ وسکوتہ علیہ السلام علی شأنھما یدل علی أن جہاد المستضعفین من المسلمین فی ھٰذا الزمان حق وصواب فقال لی علی ھٰذا الحدیث أی قصۃ ھٰذین الصحابیین رضی اللّٰه عنہ ملاحظات ولم یذکرھا ماھی؟ وإذا ذکر لہ حدیث ’’ فتن کقطع اللیل المظلم خیر الناس فیھا رجل آخذٌ برأس فرسہ یُخیف العدو ویخوفونہ ‘‘ تأول بہ بتأویل ھیّن غیر معتد بہ)) أخوکم الصغیر فی اللّٰہ حفظ الرحمٰن ج: (( قد انتھی الی مکتوب منکم کریم ، نمقتم فیہ ، موقفکم السدید العظیم ، وذکرتم فیہ أن أخاکم لم یأتِ بما یعول علیہ فی الدین الحنیف ، والشرع المنیف۔ قال ا للّٰه تعالٰی:﴿اِتَّبِعُوْا مَآ أُنْزِلَ إِلَیْکُمْ مِّن رَّبِّکُمْ وَلَا تَتَّبِعُوْا مِنْ دُوْنِہٖ أَوْلِیَآئَ قَلِیْلًا مَّا تَذَکَّرُوْنَ وأنتم تعلمون أن ا للّٰه قد أمر الذین آمنو بالجہاد والقتال فی سبیل ا للّٰه ، ولم یقید ذلک الأمر بما قیدہ بہ أخوکم الکریم ، فرحمنا ا للّٰه العلی العظیم۔)) ۱۱ ؍ ۳ ؍ ۱۴۲۴ھ س: ترجمہ: [ ہمارے بھائی مولوی رفیق الرحمن صاحب جوکہ متحدہ عرب امارات میں تھے انہوں نے کہا کہ امام