کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 492
حلالہ نکالنے والے اور نکلوانے والے دونوں پر لعنت فرمائی ہے۔‘‘ ] [1] تفصیل مطولات میں دیکھ لیں ۔ ۱۲ ؍ ۷ ؍ ۱۴۲۲ھ س: 1۔ ایلاء کی تعریف کیا ہے؟ ایک خاوند نے اپنی بیوی سے بدیں الفاظ علیحدگی اختیار کر رکھی ہے۔ ’’ خدا نہ تجھے میری شکل دکھائے ، نہ مجھے تیری صورت دکھائے اور ہمیں موت آلے۔ ہمارا مقدمہ بارگاہِ رب العزت میں ہی طے پائے گا۔‘‘ ان الفاظ کے بعد وہ زوجین آپس میں نہیں ملتے، ایک سال گزر جاتا ہے۔ باقاعدہ طلاق نہیں دی گئی۔ کیا مذکور بالا الفاظ طلاق کے قائم مقام سمجھے جائیں گے؟ 2۔مرد نے قسم یا حلف اٹھا کر متذکرہ الفاظ نہیں کہے۔ تو کیا چار ماہ کی مدتِ ایلاء کا اطلاق اس کیس پر ہوگا؟ 3۔خاوند اپنی بیوی کو طلاق دے ڈالتا ہے ، مگر بیوی کہیں دور ہے ، اس کو طلاق کی اطلاع نہیں ملی۔ کیا طلاق ہوجائے گی؟ جب کسی ذریعے سے بیوی سے رابطہ ہوجائے تو اسے مطلع کردیا جاتا ہے۔ 4۔ خاوند کی کہی ہوئی یا لکھ کر دی گئی طلاق اگر بیوی وصول کرنے سے انکار کردیتی ہے تو اندریں صورت طلاق کا نفاذ ہوجائے گا؟ 5۔بالغ اولاد اگر بوجوہ اپنی والدہ کے موقف کی حامی ہو اور حالت ِتنازع میں یا طلاق کے بعد بھی اولاد اپنے باپ سے ملنا ہرگز پسند نہ کرے۔ اپنی انتہائی غلط کار اور مبینہ نافرمان ماں کو ہی حق پر سمجھ کر والد سے ہمیشہ کے لیے کٹ جانے کا اعلان کردے تو اس صورت میں باپ کی وراثت یا دیگر شرعی حقوق و فرائض کی ادائیگی کی کیا صورت ہونی چاہیے؟ جبکہ والد بہر حال اپنی اولاد کو اپنے پاس رکھنا چاہتا ہے، مگر فاحشہ اور انتہائی بد اخلاق والدہ نہ خود راہِ راست پر آتی ہے نہ اولاد ہی ایسا کرتی ہے۔ 6۔ اولاد اعلانیہ کہتی ہے کہ ہمیں نہ ایسے والد کی ضرورت ہے نہ اس کی جائیداد کی اور مع اپنی والدہ کے ساری اولاد بیرونِ ملک رہائش پذیر ہو۔ ج: 1۔ خاوند کا بیوی کے پاس نہ جانے کی قسم اٹھالینا یا پختہ تاکیدی بات کہہ دینا ایلاء کہلاتا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے قرآنِ مجید میں فرمایا: ﴿لِلَّذِیْنَ یُؤْلُوْنَ مِنْ نِّسَآئِھِمْ تَرَبُّصُ اَرْبَعَۃِ اَشْھُرٍ ج فَاِنْ فَآؤ فَاِنَّ ا للّٰه غَفُوْرٌرَّحِیْمٌ o وَاِنْ عَزَمُوا الطَّلَاقَ فَاِنَّ ا للّٰه سَمِیْعٌ عَلِیْمٌ o﴾ [البقرۃ:۲۶۶۔۲۲۷] [ ’’ جو لوگ اپنی [1] صحیح سنن ترمذی ؍ للألبانی ؍ الجزء الاوّل ؍ حدیث: ۸۹۴