کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 457
ج: 1۔ نہیں ! کیونکہ وہ محرم نہیں ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے: (( اَلْعَیْنَانِ زِنَاھُمَا النَّظَرُ)) [1] [’’ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: انسان کے لیے اس کے زنا کا حصہ لکھ دیا گیا ہے وہ یقینا اسے پانے والا ہے ، آنکھوں کا زنا دیکھنا ہے۔ (غیر محرم عورت کی طرف) کانوں کا زنا سننا ہے۔ (حرام آواز کا۔) زبان کا زنا (ناجائز) کلام کرنا ہے۔ ہاتھ کا زنا پکڑنا ہے اور پاؤں کا زنا چل کر جانا ہے۔ اور دل خواہش اور آرزو کرتا ہے اور شرم گاہ اس کی تصدیق یا تکذیب کرتی ہے۔‘‘ 2۔لڑکی اور لڑکا دونوں محصن و پاکدامن ہوں تو ان کا باہمی نکاح درست ہے۔ ورنہ نکاح ناجائز و نادرست ہے۔ ہاں توبہ کرلیں تو درست ہے، بشرطیکہ توبہ نصوح ہو۔ [التحریم:۸] [اے ایمان والو! تم اللہ کے سامنے سچی خالص توبہ کرو۔‘‘] [خالص توبہ یہ ہے کہ : (۱) گناہ کو چھوڑ دے۔ (۲) اللہ کے سامنے ندامت کااظہار کرے۔ (۳) آئندہ گناہ نہ کرنے کا عزم کرے۔ (۴) اگر گناہ کا تعلق حقوق العباد سے ہے تو اس کا ازالہ کرے۔ ] ۳ ؍ ۱۲ ؍ ۱۴۲۳ھ س:1۔ ولیمہ پر دعوت کے لیے دعوت ولیمہ کارڈ بنوانا؟ 2۔شادی کے دن دولہا کا سر پر پگڑی سی باندھنا، یعنی بازاری (کلاہ) جائز ہے یا سنت سے ثابت ہے کہ منع ہے؟ 3۔دولہا کا گلے میں ہار وغیرہ پھولوں کا ڈالنا۔ یعنی بازاری (مالا) جس کو کہتے ہیں ۔ سنت سے ثابت ہے یا کہ ممانعت ہے؟ 4۔ شادی کے روز دولہا کا زیور کسی سے مانگ کر لینا بیوی کے لیے نکاح کے بعد ان کو واپس کرنا جائز ہے؟ 5۔ولیمہ کی دعوت، رشتہ دار ، دوست مجاہدین کے علاوہ اگر غریب لوگ نہ مل سکیں تو جو مانگنے والے ہیں وہ بھی غربا اور مساکین میں شامل کرسکتے ہیں ؟ 6۔ شادی کے روز دولہا کے ساتھ اس کے گھر سے اس کی والدہ، بہن کا ساتھ جانا اور نکاح کرکے ساتھ لے آنا یہ ثابت ہے کہ نہیں ؟ یا کہ تین آدمی کا نکاح کے لیے جانا ثابت ہے یا کہ برات کے طور پر دس ، پندرہ آدمی ساتھ جاسکتے ہیں ؟ (محمد اعظم سلفی ، راولپنڈی کینٹ) ج: 1۔ اس کی حیثیت اطلاعی مکتوبات کی سی ہے۔ [1] صحیح بخاری ؍ کتاب الاستیذان ؍ باب زنی الجوارح ،صحیح مسلم ؍ کتاب القدر ؍ باب قدر علی ابن آدم حظہ من الزنیٰ وھٰذا لفظ مسلم وروایۃ البخاری مختصرۃ