کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 397
ج: روح کے بدن میں لوٹائے جانے کی براء بن عازب رضی اللہ عنہ والی حدیث پر آپ نے دو حکم لگائے، غلط روایت اور ضعیف روایت۔ جبکہ آپ کی یہ دونوں باتیں درست نہیں ۔ کیونکہ یہ حدیث نہ غلط ہے، نہ ضعیف۔ بلکہ حسن صحیح ہے۔ چنانچہ محدث دوراں شیخ البانی رحمہ اللہ تعلیق مشکاۃ میں لکھتے ہیں : [1] (( وإسنادہ صحیح)) صاحب تنقیح الرواۃ رحمہ اللہ فرماتے ہیں : (( وحدیث براء بن عازب ھذا رواہ أیضا النسائی وابن ماجہ، والحاکم ، وقال: صحیح علی شرط الشیخین ، وابن خزیمۃ والبیہقی ، والضیاء فی المختارۃ ، وأبو عوانۃ الإسفراینی فی صحیحہ ، وابن مندہ فی کتاب الروح والنفس، ، ولہ شاہد عن أبی سعید عند أحمد وابن أبی الدنیا فی ذکر الموت ، وابن أبی عاصم فی السنۃ ، والنسائی وابن جریر ، والبیہقی فی عذاب القبر ، وصحح ، وقد تکلم ابن حزم فی المنہال وھو راوی الحدیث ، ولا یلتفت إلیہ بعد احتجاج الشیخین بہ۔ ۱ ھ)) صاحب مرعاۃ المفاتیح رحمہ اللہ لکھتے ہیں :(( (رواہ أحمد وأبو داؤد) فی السنۃ ، وأخرجہ أیضا النسائی ، وابن ماجہ مختصرا ، والبیہقی ، وقال: ھذا حدیث صحیح الإسناد۔ والحاکم ، وقال: صحیح علی شرط الشیخین۔ وقال المنذری فی الترغیب بعد ذکر الحدیث من روایۃ الإمام أحمد: ھذا حدیث حسن رواتہ محتج بھم فی الصحیح ، وھو مشہور بالمنہال ابن عمرو عن زاذان عن البراء۔ کذا قال أبو موسی الأصبہانی والمنہال وثقہ ابن معین والعجلی وروی لہ البخاری حدیثا واحدا ، ولزاذان فی کتاب مسلم حدیثان۔ ۱ ھ)) آپ نے حافظ ابن حجر رحمہ اللہ تعالیٰ کا کلام نقل فرمایا، ظاہر یہی ہے آپ نے اس پر اعتماد بھی کیا۔ اسی لیے مناسب ہے کہ اس حدیث کے متعلق حافظ ابن حجر رحمہ اللہ تعالیٰ کا فیصلہ بھی نقل کردیا جائے، تاکہ آپ کو ایک گنا اطمینان و سکون حاصل ہوجائے۔ چنانچہ حافظ صاحب موصوف رحمہ اللہ تعالیٰ اپنی مایہ ناز کتاب ’’ فتح الباری ‘‘ میں لکھتے ہیں : (( وقد رواہ زاذان أبو عمر عن البراء مطولا مبینا أخرجہ أصحاب السنن ، وصححہ أبو عوانۃ وغیرہ ، وفیہ من الزیادۃ فی أولہ: استعیذوا باللّٰہ من عذاب القبر۔ وفیہ: فترد روحہ فی جسدہ۔ وفیہ: فیأتیہ ملکان فیجلسانہ الخ وقال فی موضع من ھذہ الباب: [1] مشکوٰۃ ؍ کتاب الجنائز ؍ باب ما یقال عند من حضرہ الموت