کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 372
فَظَنَنَّا اَنَّہٗ یُرِیْدُ اُمَّہُ الَّتِیْ وَلَدَتْہُ قَالَ: قَالَتْ عَائِشَۃُ رضی اللّٰه عنہ اَلاَ اُحَدِّثُکُمْ عَنِّیْ وَعَنْ رَسُوْلِ ا للّٰه صلی ا للّٰه علیہ وسلم قُلْنَا بَلٰی قَالَتْ لَمَّا کَانَتْ لَیْلَتِیَ الَّتِیْ کَانَ النَّبِیُّ صلی ا للّٰه علیہ وسلم فِیْھَا عِنْدِی انْقَلَبَ فَوَضَعَ رِدَائَہٗ وَخَلَعَ نَعْلَیْہِ فَوَضَعَھُمَا عِنْدَ رِجلَیْہِ وَبَسَطَ طَرَفَ اِزَارِہٖ عَلٰی فِرَاشِہٖ فَاضْطَجَعَ فَلَمْ یَلْبَثْ اِلاَّ رَیْثَمًا ظَھَرَ اَنَّہٗ قَدْ رَقَدْتُ فَاَخَذَ رِدَائَہٗ رُوَیْدًا وَانْتَعَلَ رُوَیْدًا وَفَتَحَ الْبَابَ [رُوَیْدًا] فَخَرَجَ ثُمَّ اَجَافَہٗ رُوَیْدًا فَجَعَلْتُ دِرْعِیْ فِیْ رَأْسِیْ وَاخْتَمَرْتُ وَتَقَنَّعْتُ اِزَارِیْ ثُمَّ انْطَلَقْتُ عَلٰی اِثْرِہٖ حَتّٰی جَائَ الْبَقِیْعَ فَقَامَ فَاَطَالَ الْقِیَامَ ثُمَّ رَفَعَ یَدَیْہِ ثَلاَثَ مَرَّاتٍ ثُمَّ انْحَرَفَ فَانْحَرَفْتُ وَاَسْرَعَ فَاَسْرَعْتُ فَھَرْوَلَ فَھَرْوَلْتُ فَأَحْضَرَ فَاَحْضَرْتُ فَسَبَقْتُہٗ فَدَخَلْتُ فَلَیْسَ اِلاَّ اَنِ اضْطَجَعْتُ فَدَخَلَ فَقَالَ: مَالَکِ یَا عَائِشُ حَشْیَا رابِیَۃً؟ قَالَتْ: قُلْتُ لاَ شَیْئَ یَا رَسُوْلَ ا للّٰه صلی ا للّٰه علیہ وسلم قَالَ لَتُخْبِرِیْنِیْ اَوْ لَیُخْبِرَنِّیَ اللَّطِیْفُ الْخَبِیرُ قَالَتْ قُلْتُ: یَا رَسُوْلَ ا للّٰه صلی ا للّٰه علیہ وسلم بِأَبِیْ اَنْتَ وَاُمِّیْ فَأَخْبَرْتُہُ الْخَبَرَ قَالَ فَاَنْتِ السَّوَادُ الَّذِیْ رَاَیْتُہٗ اَمَامَی؟ قُلْتُ: نَعَمْ۔ فَلَھَزَنِیْ فِیْ صَدْرِیْ لَھْزَۃً اَوْ جَعَتْنِیْ ثُمَّ قَالَ اَظَنَنْتِ اَنْ یَحِیْفَ ا للّٰه عَلَیْکِ وَرَسُولُہٗ؟ قَالَتْ: مَھْمَا یَکْتُمِ النَّاسُ یَعْلَمْہُ ا للّٰه (قَالَ) نَعَمْ۔ قَالَ: (( فَاِنَّ جِبْرِیْلَ اَتَانِیْ حِیْنَ رَاَیْتِ فَنَادَانِیْ فَاَحْفَاہُ مِنْکِ فَاَجَبْتُہٗ فَاَخْفَیْتُہٗ مِنْکِ وَلَمْ یَکُنْ لِیَدْخُلَ عَلَیْکِ وَقَدْ وَضَعْتِ ثِیَابَکِ وَظَنَنْتُ اَنْ قَدْرَ قَدْتِ فَکَرِھْتُ اَنْ اُوْ قِظَکِ وَخَشِیْتُ اَنْ تَسْتَوحِشِیْ فَقَالَ اِنَّ رَبَّکَ یَاْمُرْکَ اَنْ تَأْتِیَ اَھْلَ الْبَقِیْعِ فَتَسْتَغْفِرَلَھُمْ)) قَالَ قُوْلِیْ: اَلسَّلاَمُ عَلٰی اَھْلِ الدِّیَارِ مِنَ الْمُؤْمِنِیْنَ وَالْمُسْلِمِیْنَ وَیَرْحَمُ ا للّٰه المُسْتَقْدِمِیْنَ مِنَّا وَالْمُسْتَأْخِرِیْنَ وَاِنَّا اِنْ شَائَ ا للّٰه بِکُمْ لَلَاحِقُوْنَ)) ترجمہ:.....’’ محمد بن قیس بن مخرمہ بن المطلب نے ایک دن کہا: میں اپنی اور اپنی ماں کی بات نہ بتاؤں ؟ ہم نے سمجھا کہ وہ اپنی حقیقی والدہ کی بات کہہ رہے ہیں ۔ کہنے لگے: حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے پوچھا کہ میں تمہیں اپنی اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک رودادنہ سناؤں ؟ ہم نے کہا: ہاں ! کیوں نہیں ۔ تو فرمانے لگیں : ایک روز میری باری پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میرے ہاں تھے۔ گھر پہنچ کر آپ نے چادر رکھ دی، جوتے بھی اتار کر پاؤں کے قریب رکھ دیئے اور اپنی چادر کا ایک حصہ بستر پر بچھاکر لیٹ گئے۔ تھوڑی دیر بعد جب انہیں اندازہ ہوا کہ میں سوچکی ہوں تو آہستہ سے چادر اٹھائی، چپکے سے جوتے پہنے ، دروازہ کھول کر باہر نکل گئے اور آہستہ سے دروازہ بند کردیا۔ چنانچہ میں نے