کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 351
ضعیف من قبل الحفظ ، وأشار الحاکم (۱؍۳۱۸) ثم الذہبی إلی تقویتہ ، وھو حق ، فإن للحدیث طرقا وشواہد کثیرۃ یقطع الواقف علیھا بأن للحدیث أصلا أصیلا خلافا لمن حکم علیہ بالوضع ، أو قال: إنہ باطل۔ وقد جمع طرقہ الخطیب البغدادی فی جزء ، وھو مخطوط فی المکتبۃ الظاہریۃ بدمشق ، وقد حقق القول علیہ العلامۃ أبو الحسنات اللکنوی فی: الآثار المرفوعۃ فی الأخبار الموضوعۃ (ص:۳۵۳؍ ۳۷۴) فلیراجعہ من شاء البسط ، فإنہ یغنی عن کل ماکتب فی ھذا الموضوع ، وقد أشار المؤلف إلی تقویتہ أیضا بذکرہ طریق أبی رافع عقبہ ، وانظر أجوبۃ الحافظ ابن حجر حول ھذا الحدیث ، وأحادیث أخری مبسوطۃ فی آخر ھذا الکتاب۔ ۱ ھ [خلاصہ یہ ہے کہ نمازِ تسبیح احادیث سے ثابت ہے اور وہ احادیث قابل حجت ہیں ۔ ] ۱۷ ؍ ۱۰ ؍ ۱۴۲۲ھ بسم ا للّٰه الرحمٰن الرحیم ۱:.....((قال الشیخ الألبانی رحمہ ا للّٰه تعالیٰ فی تعلیق المشکاۃ: وأشار الحاکم (۱؍۳۱۸) ثم الذہبی إلی تقویتہ ، وھو حق إلی قولہ: وقد أشار المؤلف إلی تقویتہ أیضا بذکرہ طریق أبی رافع عقبہ وانظر أجوبۃ الحافظ ابن حجر حول ھذا الحدیث ، وآٔحادیث أخری مبسوطۃ فی آخر الکتاب۔ ۱ ھ (۱؍۴۱۹) وقال الحافظ ابن حجر رحمہ ا للّٰه تعالی فی تلک الأجوبۃ بعد أن أشبع الکلام علی حدیث صلاۃ التسبیح وطرقہ الموصولۃ والمرسلۃ: والحق أنہ فی درجۃ الحسن لکثرۃ طرقہ التی یقوی بھا الطریق الأولی۔ واللّٰہ أعلم۔ ۱ ھ (۳؍۱۷۸۲) وقد قال فی بیان الطریق الأول: وقال مسلم فیما رواہ الخلیلی فی الإرشاد بسندہ عنہ: لایروی فی ھذا الحدیث إسناد أحسن من ھذا۔ وقال أبوبکر بن أبی داؤد عن أبیہ لیس فی صلاۃ التسبیح حدیث صحیح غیرہ۔ ۱ ھ (۳؍۱۷۱۸۱))) ۲:.....((قال الدار قطنی فی سننہ:حدثنا أحمد بن محمد بن أبی بکر الواسطی ، ثنا عبیداللّٰہ بن سعد ، حدثنی عمی، ثنا ابن أخی الزہری عن عمہ ، أخبرنی سالم: أن