کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 307
’’اور جس فرد نسبی کا ذکر پہلے ہو چکا ہے اسے فرد سمجھنے کے بعد اگر کوئی دوسرا راوی مل جائے جس نے اس کی موافقت کی ہو تو وہ متابع ہے۔‘‘ نیز ایک توجیہ کے مطابق محمد بن اسحاق بھی امام مالک رحمۃ اللہ علیہ کی متابعت کرتا ہے جیسا کہ صاحب آثار السنن کے کلام سے مترشح ہو رہا ہے: (( وثالثاً: قال الحافظ ابن الصلاح : المضطرب من الحدیث ھو الذی تختلف الروایۃ فیہ فیر ویہ بعضھم علی وجہ و بعضھم علی وجہ آخر مخالف لہ ، وانما نسمیہ مضطر بااذا تساوت الروایتان اما اذا ترجحت احد ھما بحیث لا تقاومھا الاخری بان یکون راویھا احفظ اکثر صحبۃ للمروی عنہ وغیر ذالک من وجوہ الترجیحات المعتمدۃ فالحکم للراجحۃ ولا یطلق علیہ حینئذ وصف المضطرب ولا لہ حکمہ ۱ھ (علوم الحدیث ،ص:۸۴) وفی التدریب شرح التقریب: (النوع التاسع عشر المضطرب ھو الذی یروی علی اوجہ مختلفۃ) من راو واحد مرتین او اکثراو من راویین او رواۃ (متقاربۃ) و عبارۃ ابن الصلاح متساویۃ و عبارۃ ابن جماعۃ متقاومۃ بالواو والمیم ای ولا مرجح (فان رجحت احدی الروایتین) اوالروایات (بحفظ راویھا) مثلاً( اوکثرۃ صحبتہ المروی عنہ او غیر ذالک) من وجوہ الترجیحات (فالحکم للراجحۃ ولا یکون) الحدیث (مضطربا) لا الروایۃ الراجحۃ کما ھو ظاھر ولا المرجوحۃ بل ھی شاذۃ او منکرۃ کما تقدم ۱ھ (ص:۱۶۹) وفی شرح النخبۃ : و ان کانت المخالفۃ بابدالہ ای الراوی ولا مرجح لا حدی الروایتین علی الاخری فھذا ھو المضطرب وھو یقع فی الاسناد غالبا وقد یقع فی المتن لکن قل ان یحکم المحدث علی الحدیث بالا ضطراب بالنسبۃ الی اختلاف فی المتن دون الاسناد ۱ھ وفی حاشیتہ : قولہ : ولا مرجح .....الخ فان ترجحت بان یکون راویھا احفظ او اکثر صحبۃ للمروی عنہ سیما اذا کان ولدہ او قریبہ او مولاہ او بلدیہ او غیر ذالک من وجوہ الترجیح المعتمدۃ ککونہ حین التحمل بالغا