کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 272
اس سے آگے استاد محترم حافظ عبدالمنان صاحب نور پوری نے شیخ ألبانی رحمہ اللہ کے حوالہ سے وضاحت کی ہے کہ ایک فرسخ (تین میل) والی روایت صحیح نہیں ہے۔ ] قال الشیخ الألبانی رحمہ ا للّٰه تعالی: لقد اغتر المؤلف بسکوت الحافظ علیہ ، وسبقہ إلی ذلک الصنعانی فی سبل السلام ، والشوکانی فی السیل الجرار (۱؍۳۰۷) وأما فی نیل الأوطار فقد شک فی صحتہ فقال عقبہ (۳؍۱۷۶): أَوردہ الحافظ فی التلخیص ولم یتکلم علیہ ، فإن صح کان الفرسخ ھو المتیقن ، ولا یقصر فیمادونہ إذا کان یسمی سفراً لغۃ أو شرعا وأقول: أنی لہ الصحۃ ، وفیہ أبوھارون العبدی ، قال الحافظ فی التقریب: متروک ، ومنھم من کذبہ۔ وقد خرجت الحدیث فی الإرواء (۳؍۱۵) من روایۃ جمع من المصنفین عنہ فلیرجع إلیہ من شاء وفی ذلک ما یؤکدہ أنہ لا یجوز الاغترار بسکوت الحافظ عن الحدیث ، وأن ذلک لا یعنی ثبوتہ عندہ ، حتی ولو کان ذلک فی الفتح علی أنہ أنظف مصنفاتہ من الأحادیث الضعیفۃ ، ولعلہ من أجل ذلک لم یورد ھذا الحدیث فیہ ، واللّٰہ أعلم۔ ۱ھ [تمام المنۃ:۳۱۹] وقال فی الإرواء: وأما حدیث أنس فھو من روایۃ یحیی بن یزید الھنائی قال: سألت أنس بن مالک عن قصر الصلاۃ ،فقال: کان رسول اللّٰه صلی ا للّٰه علیہ وسلم إذا خرج مسیرۃ ثلاثۃ أمیال أو ثلاثۃ فراسخ (شعبۃ الشاک) صلی رکعتین۔ أخرجہ مسلم (۲؍۱۴۵) وأبو عوانۃ (۲؍۳۴۶) وأبو داؤد (۱۲۰۱) وابن أبی شیبۃ (۲؍۱۰۸ ؍ ۱۔۲) والبیہقی (۳؍۱۴۶) وأحمد (۳؍۱۲۹) وزاد بعد قولہ: عن قصر الصلاۃ۔ قال: کنت أخرج إلی الکوفۃ فأصلی رکعتین حتی أرجع۔ وھی روایۃ للبیہقی، وإسنادھا صحیح۔ ۱ھ ثم ذکر حدیث أبی سعید الخدری الذی فی إسنادہ أبو ھارون العبدی المتروک، ثم قال: فالعمدۃ علی حدیث أنسٍ ، وقد قال الحافظ فی الفتح (۲؍۴۶۷): وھو أصح حدیث ورد فی بیان ذلک وأصرحہ، وقد حملہ من خالفہ علی أن المرادبہ المسافۃ التی یبتدأ منھا القصر ، لاغایۃ السفر ، ولا یخفی بعد ھذا الحمل مع أن البیہقی (قلت: وکذا أحمد)