کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 182
ج: قرآن مجید میں ہے: ﴿فَإِذَا قَرَأْتَ الْقُرْآنَ فَاسْتَعِذْ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ﴾ حافظ ابن حجر نے کچھ احادیث جمع فرمائی ہیں ۔ لکھتے ہیں :(( وَعَنْ أَنَسٍ رضی اللّٰه عنہ اَنَّ النَّبِیِّ صلی ا للّٰه علیہ وسلم وَاَبَا بَکْرٍ، وَعُمَرَ کَانُوْا یَفْتَتِحُوْنَ الصَّلَاۃَبِالْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ العَالَمِیْنَ مُتَّفَقٌ عَلَیْہِ۔ زَادَ مُسْلِمٌ: لاَ یَذْکُرُونَ بِسْمِ ا للّٰه الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ فِیْ اَوَّلِ قِرَائَۃٍ ، وَلاَ فِیْ آخِرِھَا۔ وَفِیْ اُخْرٰی لاِبْنِ خُزَیْمَۃَ: کَانُوْا یُسِرُّوْنَ۔ وَعَلَی ھٰذَا یُحْمَلُ النَّفْیُ فِیْ رِوَایَۃِ مُسْلِمٍ خِلاَفًا لِمَنْ اَعَلَّھَا۔ وَعَنْ نُعَیْمِ المُجْمِرِ قَالَ: صَلَّیْتُ وَرَآئَ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ رضی اللّٰه عنہ فَقَرَاَ بِسْمِ ا للّٰه الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ ثُمَّ قَرَاَ بِأُمِّ الْقُرْآنِ حَتَّی إِذَا بَلَغَ وَلاَ الضَّآلِّیْنَ قَالَ: آمِیْنَ۔ وَیَقُوْلُ کُلَّمَا سَجَدَ ، وَإِذَا قَامَ مِنَ الجُلُوسِ: ا للّٰه اَکْبَرُ۔ ثُمَّ یَقُولُ اِذَا سَلَّمَ: وَالَّذِیْ نَفْسِیْ بِیَدِہٖ اِنِّیْ لَاَشْبَھُکُمْ صَلاَۃً بِرَسُوْلِ ا للّٰه صلی ا للّٰه علیہ وسلم ۔ رَوَاہُ النَّسَائِیُّ وَابْنُ خُزَیْمَۃَ)) [’’اور انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم اور ابوبکر اور عمر رضی اللہ عنہ الحمد للّٰہِ ربِّ العالمین سے نماز شروع کیا کرتے تھے۔ [متفق علیہ]مسلم میں اتنا زیادہ ہے کہ بسم اللہ الرحمن الرحیم شروع یا اخیر میں نہیں پڑھتے تھے اور احمد اور نسائی اور ابن خزیمہ کی روایت میں ہے کہ بسم اللہ بلند آواز سے نہیں پڑھا کرتے تھے۔ اور ابن خزیمہ کی روایت میں ہے کہ بسم اللہ آہستہ پڑھتے تھے اور اس پر مسلم کی نفی کو محمول کیاجائے گا۔ بخلاف ان لوگوں کے جو اس کو معلول کہتے ہیں ۔ اور نعیم مجمر سے روایت ہے کہ میں نے ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کے پیچھے نماز پڑھی اس نے بسم اللہ پڑھی پھر الحمد پڑھی، جب ولا الضالین پر پہنچے تو آمین کہی اور جب بھی سجدہ کرتے یا بیٹھنے سے اٹھتے تو اللہ اکبر کہتے، پھر جب سلام پھیرتے تو کہتے مجھے اللہ کی قسم! میری نمازبالکل رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی نماز جیسی ہے۔ اسے نسائی اور ابن خزیمہ نے روایت کیا۔ ] [1] ۱۰ ؍ ۱ ؍ ۱۴۲۴ھ س: نماز کی حالت میں شروع سے لے کر آخر تک یعنی اللہ اکبر سے لے کر سلام پھیرنے تک نماز ی کو کہاں نگاہ رکھنی چاہیے؟ (محمد عثمان، چک چٹھہ) ج: چند احادیث نقل کی جاتی ہیں ، جن سے نماز میں نگاہ کی جگہ کا پتہ چلتا ہے۔(( عَنْ عَائِشَۃَ رضی ا للّٰه عنہا قَالَتْ: سَأَلْتُ رَسُوْلَ ا للّٰه صلی ا للّٰه علیہ وسلم عَنِ الْاِلْتِفَاتِ فِی الصَّلاَۃِ؟ فَقَالَ: ھُوَ اخْتِلاَسٌ یَخْتَلِسُہُ الشَّیْطَانُ مِنْ صَلاَۃِ الْعَبْدِ۔ مُتَّفَقٌ عَلَیْہِ۔ وَعَنْ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ ا للّٰه صلی ا للّٰه علیہ وسلم : [1] بلوغ المرام ؍ کتاب الصلاۃ ؍ باب صفۃ الصلاۃ