کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 165
[رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب گرمی سخت ہو تو نمازِ ظہر ٹھنڈے وقت میں پڑھو۔ (مطلب یہ ہے کہ شدت کی گرمی میں سورج ڈھلتے ہی فوراً نہ پڑھو تھوڑی دیر کر لو) ] [1] ۲۲؍۶؍۱۴۲۳ھ س: اگر آدمی کو نیند یا تھکاوٹ یا کوئی اور مجبوری ہو تو کیا وہ مغرب کی نماز کے ساتھ عشاء کی نماز پڑھ سکتا ہے ؟ سفر کے علاوہ تفصیل سے جواب دیں ۔ (حافظ خالد محمود رینالہ خورد) ج: جمع صوری کر سکتا ہے ۔جمع تقدیم یا جمع تاخیر حضر میں نہیں کر سکتا۔ ۷؍۹؍۱۴۲۳ھ سفر میں دو نمازیں جمع کرنا: ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم دورانِ سفر ظہر اور عصر کو اور مغرب اور عشاء کو جمع کرتے تھے۔[2] جمع تقدیم:.....ظہر کے ساتھ عصر اور مغرب کے ساتھ عشاء کی نماز پڑھنا۔ جمع تاخیر:…عصر کے ساتھ ظہر اور عشاء کے ساتھ مغرب کی نماز پڑھنا۔ معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ غزوۂ تبوک کے موقع پر اگر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سورج ڈھلنے کے بعد سفر شروع کرتے تو ظہر اور عصر کو اس وقت جمع فرما لیتے اور اگر سورج ڈھلنے سے پہلے سفر شروع کرتے تو ظہر کو مؤخر کر کے عصر کے ساتھ ادا فرما تے۔ اسی طرح اگر سورج غروب ہونے کے بعد سفر شروع کرتے تو مغرب اور عشاء اسی وقت پڑھ لیتے اور اگر سورج غروب ہونے سے پہلے سفر شروع کرتے تو مغرب کو مؤخر کر کے عشاء کے ساتھ پڑھتے۔ [3] حضر میں دو نمازوں کو جمع کرنا: ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مدینہ میں ظہر اور عصر کو جمع کرکے پڑھا حالانکہ وہاں (دشمن کا) خوف نہ تھا ، نہ سفر کی حالت تھی(راوی) ابو زبیر کہتے ہیں میں نے سعید بن جبیر سے پوچھا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا کیوں کیا تھا ؟ سعید نے جواب دیا: جس طرح تم نے مجھ سے دریافت کیا ، اسی طرح میں نے ابن عباس رضی اللہ عنہ سے پوچھا تھا تو انہوں نے یہ جواب دیا تھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم اپنی اُمت کو دشواری میں نہیں رکھنا چاہتے تھے۔ ] [4] س: نمازیں جمع کرنے کا صحیح طریقہ بتائیں ۔ (شاہد سلیم ، لاہور) [1] بخاری؍مواقیت الصلاۃ ؍باب الابراد بالظہر فی شدۃ الحر۔ مسلم؍المساجد ؍باب استحباب الابراد بالظہر [2] بخاری؍تقصیر الصلاۃ؍باب الجمع فی السفر بین المغرب والعشاء [3] ابو داؤد؍ابواب صلاۃ السفر ؍باب الجمع بین الصلاتین۔ ترمذی ؍الجمعۃ؍باب فی الجمع بین الصلاتین [4] مسلم؍صلاۃ المسافرین؍باب الجمع بین الصلاتین فی الحضر