کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 140
عند ابن عدی أیضاً رجلاً مجھولاً ، وإلا لم یکن حدیثہ عند ابن عدی مجود الإسناد ، وکلام ابن عدی ھذا حکاہ صاحب تہذیب التھذیب بلفظ : وقال ابن عدی : للحدیث أصل فی بعض مارواہ معمر عن الزھری لکنہ أفسد إسنادہ ، ورواہ سلیمان ابن داؤد ھذا فجود الإسناد۔۱ھ قال ابن عدی فی الکامل : وھذا الذی ذکر عن أحمد بن حنبل مما قد ذکرتہ أن ھذا سلیمان بن أبی داؤد من أھل الجزیرۃ ، وما ذکرت أنہ وجد فی أصل یحیی بن حمزۃ عن سلیمان بن أرقم ، ولکن الحکم لم یضبطہ جمیعا خطأ۔ والحکم بن موسی قد ضبط ذلک ، وسلیمان بن داؤد الخولانی صحیح کما ذکرہ الحکم ، وقد رواہ عنہ غیر یحیی بن حمزۃ إلا أنہ مجھول۔ ۱ھفالضمیر المنصوب فی قولہ : أنہ مجھول۔ یعود علی قولہ : غیر یحیی بن حمزۃ ۔ لا علی یحیی بن حمزۃ ، ولا علی سلیمان بن داؤد الخولانی ، فالذھبی۔ رحمہ اللّٰه تعالیٰ۔ قد أخطأ فی فھم کلام ابن عدی فی موضعین الأول أنہ عزا قول : ولیحیی بن حمزۃ عن سلیمان بن داؤد الخولانی الدمشقی أحادیث کثیرۃ الخ إلی ابن عدی ، وانما ھو لعثمان بن سعید الدارمی۔ والثانی أنہ أعاد الضمیر المنصوب فی قولہ : ولکنہ رجل مجھول۔ علی سلیمان بن داؤد حیث قال بعدہ : یعنی الخولانی ، وانما یعود علی قولہ : غیر یحیی بن حمزۃ۔ الذی أسقطہ صاحب المیزان من البین۔ واللّٰه اعلم۔ ھذا وقد قال صاحب تہذیب التہذیب : وقال البیہقی : وقد أثنی علی سلیمان بن داؤد أبو زرعۃ ، وأبو حاتم ، و عثمان بن سعید ، وجماعۃ من الحفاظ ، ورأوا ھذا الحدیث الذی رواہ فی الصدقات موصول الإسناد حسنا۔ ۱ھ وبعد التیاو التی قال الحافظ فی تہذیب التہذیب : أما سلیمان بن داؤد الخولانی فلا ریب فی أنہ صدوق لکن الشبھۃ دخلت علی حدیث الصدقات من جھۃ أن الحکم بن موسی غلط فی أسم والد سلیمان ، فقال : سلیمان ابن داؤد۔ وإنما ھوسلیمان بن أرقم ، فمن أخذبھذا ضعف الحدیث ولا سیما مع قول من قال : إنہ قرأہ کذلک فی