کتاب: قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام و مسائل - صفحہ 139
ج: آپ نے میزان الاعتدال سلیمان بن داؤد الخولانی کے ترجمہ سے ان کے متعلق یحییٰ بن معین اور عثمان بن سعید کے اقوال نقل فرمائے ہیں جبکہ اسی میزان الاعتدال میں سلیمان بن داؤد الخولانی کے ترجمہ میں ان کے متعلق اور محدثین کے اقوال بھی موجود ہیں : ۱۔قال أحمد:…((أرجو أن یکون صحیحا ، وأخرجہ فی مسندہ عن الحکم بن موسی)) ۲۔قال ابن عدی:…(( ولیحیی بن حمزۃ عن سلیمان بن داؤد الخولانی الدمشقی أحادیث کثیرۃ ، وأرجوأنہ لیس کما قال یحیی بن معین ، و أحادیثہ حسان مستقیمۃ ، وقول أحمد: إنہ من أھل الجزیرۃ ، وإنہ سلیمان بن أبی داؤد ، وما ذکروہ من أنہ وجد فی أصل یحیی عن سلیمان ابن ارقم ولکن الحکم لم یضبط خطأ فان الحکم قد ضبط ذٰلک سلیمان ابن داؤد الخولانی ، ولکنہ رجل مجھول۔ یعنی الخولانی۔ أقول:.....إذا کان الخولانی عند ابن عدی رجلا مجھولا فکیف یکون حدیثہ عند ابن عدی نفسہ حسنا مستقیما؟ وقد قال ھو عینہ حسب ما نقل عنہ الذھبی۔ وأحادیثہ حسان مستقیمۃ۔ وقد قال : وأرجو أنہ لیس کما قال یحیی بن معین۔ والحل أن القول بأن أحادیثہ حسان مستقیمۃ ، وأنہ لیس کما قال یحیی بن معین۔ لیسا من أقوال ابن عدی ، وإنما ھما من أقوال عثمان بن سعید کما یبدو ذلک بالرجوع الکامل۔ وقد ظھر من ذلک أن الرجل لیس بضعیف عند عثمان بن سعید أیضا ، بل ھو عندہ من رواۃ الحسان المستقیمۃ ، ولیس عندہ بمجھول ، ولاغیر صحیح الحدیث ، ولا بضعیف ، ولا لیس بشیء کما قال یحیی۔ فقول الذھبی : قال عثمان بن سعید : سلیمان بن داؤد الخولانی یروی عن یحیی بن حمزۃ ضعیف۔ کما تری ۔ ثم صواب العبارۃ : یروی عنہ یحیی بن حمزۃ۔ وفی الحل نظر ظاہر فإن ابن عدی قال فی الکامل : وقد روی عن سلیمان بن داؤد غیر یحیی بن حمزۃ ، وصدقۃ بن عبداللّٰه کما ذکرتہ من الشامیین وأماحدیث الصدقات فلہ أصل فی بعض رواۃ معمر عن الزھری عن أبی بکر ابن عمرو بن حزم، فأفسد إسنادہ ، وحدیث سلیمان بن داود مجود الإسناد۔۱ھ،فلا یکون الخولانی