کتاب: آیت الکرسی کی فضیلت اور تفسیر - صفحہ 105
’’میں تمہارے پاس بہترین انسان کے ہاں سے آیا ہوں۔‘‘ ۴: شاہِ روم قیصر کو: آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے شاہِ روم قیصر کو بھی دعوتِ توحید دی۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ دعوت ایک گرامی نامے کے ذریعے دی ، جو کہ اسے ارسال کیا گیا۔ امام بخاری نے حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہما کے حوالے سے اس مکتوبِ گرامی کو روایت کیا ہے، جس کے الفاظِ مبارکہ حسبِ ذیل ہیں: ’’مِنْ مُّحَمَّدٍ عَبْدِ اللّٰہِ وَرَسُوْلِہٖ - صلي اللّٰه عليه وسلم - إِلٰی ہِرَقْلَ عَظِیمِ الرُّومِ۔ سَلَامٌ عَلٰی مَنِ اتَّبَعَ الْہُدٰی۔ أَمَّا بَعْدُ، فَإِنِّيٓ أَدْعُوکَ بِدِعَایَۃِ الْإِسْلَامِ۔ أَسْلِمْ تَسْلَمْ یُؤْتِکَ اللّٰہُ أَجْرَکَ مَرَّتَیْنِ، فَإِنْ تَوَلَّیْتَ فَإِنَّ عَلَیْکَ إِثْمَ الْأَرِیسِیِّیْنَ۔ وَ{یَآ أَہْلَ الْکِتَابِ تَعَالَوْا إِلٰی کَلِمَۃٍ سَوَآئٍم بَیْنَنَا وَبَیْنَکُمْ اَنْ لَّا نَعْبُدَ إِلَّا اللّٰہَ وَلَا نُشْرِکَ بِہٖ شَیْئًا وَّلَا یَتَّخِذَ بَعْضُنَا بَعْضًا اَرْبَابًا مِّنْ دُونِ اللّٰہِ فَإِنْ تَوَلَّوْا فَقُولُوا اشْہَدُوا بِأَنَّا مُسْلِمُونَ}[1]،[2] ’’اللہ تعالیٰ کے بندے اور ان کے رسول محمد۔ صلی اللہ علیہ وسلم ۔ کی جانب سے رومیوں کے سردار ہِرَقل کی طرف۔ ہدایت کی اتباع کرنے والے پر سلام۔ [1] سورۃ آل عمران / جزء من رقم الآیۃ ۶۴۔ آیتِ شریفہ کا آغاز بایں الفاظ ہے: {قُلْ یٰٓاَہْلَ الْکِتٰبِ…} [2] صحیح البخاري، کتاب بدء الوحي، باب ، جزء من رقم الحدیث ۷، ۱/۳۲۔