کتاب: آداب دعا - صفحہ 102
((لَا تُشَدُّ الرِّحَالَ اِلَّا اِلـٰی ثَلَاثَۃِ مَسَاجِدَ: اَلْمَسْجِدُ الْحَرَامُ، وَ مَسْجِدِیْ ہَذَا وَ الْمَسْجِدُ الْأَقْصَیٰ))۔ [1] ’’تین مسجدوں : مسجدِ حرام (مکہ مکرمہ )اور میری اس مسجد (نبوی) اور مسجدِ اقصیٰ کے سوا (نیکی کی نیّت سے) رختِ سفر نہ باندھا جائے ۔‘‘ امام شوکانی رحمہ اللہ نے مسجدِ اقصیٰ کی فضیلت و جوازِزیارت بیان کرتے ہوئے لکھا ہے کہ اس میں بھی دعاء قبول ہوتی ہے ۔[2] ان مذکورہ ۱۴ مقامات کے علاوہ جہاں بھی بندے کو حاجت ہو ،اپنے خالق و مالک سے مانگے، شرائط و آداب او راوقات کا لحاظ رکھے تو اللہ تعالیٰ جلد سُنتا اور قبول کرتا ہے ۔ دعاء کے ارکان، پَر، اسباب اور اوقات قاضی عیاض رحمہٗ اللہ نے ’’ الشفاء فی شمائل صاحب الاصطفاء صلي ا للّٰه عليه وسلم ‘‘ جلد سوم ، ص : ۷۴۸ ،۷۴۹ پر لکھا ہے کہ ابن عطاء نے کہا ہے : ((لِلدُّعَائِ أَرْکَانٌ وَ أَجْنِحَۃٌ وَ أَسْبَابٌ وَ أَوْقَاتٌ ، فَاِنْ وَافَقَ أَرْکَانَہٗ قَوِیَ وَ اِنْ وَافَقَ أَجْنِحَتَہٗ طَارَ فِی السَّمَآئِ وَ اِنْ وَافَقَ مَوَاقِیْتَہٗ فَــازَ وَ اِنْ وَافَـقَ أَسْبَابَہٗ أَنْجَحَ ۔ فَأَرْکََانُہٗ : حُضُوْرُ الْقَلْبِ وَ الرِّقَّۃُ وَ الْاِسْتِکَانَۃُ وَ الْخشُوْعُ وَ تَعَلُّقُ الْقَلْبِ بِاللّٰہِ وَ قَطْعَۃُ الْأَسْبَابِ، وَ أَجْنِحَتُہٗ: [1] بخاری :۱۱۸۹۔۱۱۹۰، مسلم ۹؍۱۰۴،۱۰۶،۳۱۸،۱۶۸، ابو داؤد : ۲۰۳۳، ترمذی :۳۶۶، نسائی ۲؍۳۷،۳۸ ۔ [2] تحفۃ الذاکرین للشوکانی ۔