سورة الانعام - آیت 82

الَّذِينَ آمَنُوا وَلَمْ يَلْبِسُوا إِيمَانَهُم بِظُلْمٍ أُولَٰئِكَ لَهُمُ الْأَمْنُ وَهُم مُّهْتَدُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

(حقیقت تو یہ ہے کہ) جو لوگ ایمان لے آئے ہیں اور انہوں نے اپنے ایمان کے ساتھ کسی ظلم کا شائبہ بھی آنے نہیں دیا (٣٠) امن اور چین تو بس انہی کا حق ہے، اور وہی ہیں جو صحیح راستے پر پہنچ چکے ہیں۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(78) اوپر جو بات بیان کی جا چکہ ہے کہ امن اور عدم خوف کے حقدار اہل ایمان ہیں اسی کی مزید تو ضیھ کی گئی ہے، یہاں "ظلم "سے مراد شرک ہے، اور مقصود ان لوگوں کی تردید کرنی ہے جو اس زعم باطل میں مبتلا ہوتے ہیں کہ وہ بھی اللہ پر ایمان رکھتے ہیں اور بتوں کی عبادت اسی ایمان باللہ کا تقاضی ہے، تاکہ وہ اللہ کے حضور سفارشی بنیں اور انہیں اللہ سے قریب کردیں، جیسا کہ اللہ نے سورۃ زمر آیت (3) میں فرمایا ہے : کہ ہم تو ان بتوں کی پرستش اس لیے کرتے ہیں کہ یہ ہیں اللہ کے قریب کردیں "اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ قیامت کے دن اللہ کے عذاب سے امن انہیں کو نصیب ہوگا، جنہوں نے کرکیہ اعلمال کے ذریعے اپنے ایمان کو فاسد نہیں بنایا ہوگا، اور دنیا میں بھی وہی لوگ اہل حق ہیں امام احمد نے عبداللہ بن مسعود (رض) سے روایت کی ہے کہ جب یہ آیت نازل ہوئی تو لوگوں پر بڑا شاق گذرا، چناچہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے کہا کہ یا رسول اللہ ! ہم میں سے کون ہے جو اپنے آپ پر ظلم نہیں کرتا یعنی کوئی گناہ نہیں کرتا، تو آپ نے فرمایا کہ آیت کا وہ مطلب نہیں ہے جو تم سمجھ رہے ہو، کہا تم لوگوں نے اللہ کے نیک بندوں (لقمان) کا قول نہیں سنا : کہ اے میرے بیٹے ! اللہ کا کسی کو شریک نہ بناؤ بے شک شرک ظلم عظیمی ہے، آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا کہ یہاں ظلم سے مراد شرک ہے۔ ابن ابی حاتم لکھتے ہیں کہ تمام صحابہ کرام اور تابعین عظام نے (ظلم) کا معنی شرک ہی بتایا ہے۔